شمالی کوریا جوہری سرگرمیوں کے حوالے سے امریکا کو چکمہ دے رہا ہے ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکی اخبار "واشنگٹن پوسٹ" کے مطابق شمالی کوریا جس نے سنگاپور کی تاریخی سربراہ ملاقات میں اپنے جوہری ہتھیاروں کو تلف کرنے کے حوالے سے پیش رفت کا عزم کیا تھا، اس وقت اپنی جوہری سرگرمیوں کو امریکا سے چُھپانے کی کوشش کر رہا ہے۔

اخبار نے ہفتے کے روز اپنی اشاعت میں (شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر) امریکی عہدے داران کے حوالے سے بتایا ہے کہ بارہ جون کو ڈونلڈ ٹرمپ اور کِم جونگ اُن کی ملاقات کے بعد سے حاصل ہونے والے اشارے ایسے خفیہ مقامات کی موجودگی کا پتہ دے رہے ہیں جن کا مقصد جوہری ہتھیاروں کی خفیہ تیاری کے ذرائع اختیار کرنا ہے۔

اخبار نے مذکورہ ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ شمالی کوریا اپنے جوہری ذخیروں اور پیداواری ٹھکانوں کا کچھ حصّہ محفوظ رکھنے کا ارادہ رکھتا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ پیونگ یانگ واشنگٹن کے سامنے جوہری ہتھیاروں کی تلفی کے عزم کے ساتھ خفیہ طور پر اپنا جوہری پروگرام جاری رکھنا چاہتا ہے۔

رواں ہفتے کے اختتام پر امریکی ٹی وی نیٹ ورک NBC نے باور کرایا کہ پیونگ یانگ کئی خفیہ ٹھکانوں میں ایسے ایندھن کی تیاری میں اضافہ کر رہا ہے جو جوہری ہتھیاروں کے لیے مخصوص ہے۔

واضح رہے کہ سنگاپور میں ٹرمپ اور کِم کے درمیان سربراہ ملاقات کے نتیجے میں شمالی کوریا کے جوہری ہتھیاروں کے خاتمے کے حوالے سے کوئی شیڈول سامنے نہیں آیا تھا۔

اسی طرح امریکی نیٹ ورک نے انٹیلی جنس عہدے داران کے حوالے سے بتایا ہے کہ شمالی کوریا اپنے جوہری ہتھیاروں سے حقیقی دست برداری کے بجائے امریکا سے ہر ممکن رعائتیں اچکنا چاہتا ہے۔

ایک امریکی عہدے دار نے NBC نیٹ ورک کو بتایا کہ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ وہ (شمالی کوریا کے حکام) اپنے ذخیروں میں کمی لا رہے ہیں یا انہوں نے اپنی جوہری "پیداوار" کو روک دیا ہے۔

مذکورہ عہدے دار کے مطابق "اس بات کے قطعی شواہد ہیں کہ وہ امریکا کو دھوکا دینے کی کوشش کر رہے ہیں"۔

مقبول خبریں اہم خبریں