.

شام کا صوبہ اِدلِب جنگجوؤں سے پاک کیا جانا چاہیے : ایرانی وزیر خارجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف کا کہنا ہے کہ شام کے شمال مغربی صوبے اِدلِب کو جنگجوؤں سے "پاک" کیا جانا چاہیے۔ ایرانی نیوز ایجنسی فارس کے مطابق ظریف نے یہ بات اپنے دمشق کے حالیہ دورے کے دوران کہی۔

ایرانی وزیر خارجہ کا مزید کہنا تھا کہ "شام کی تمام اراضی کی حفاظت کو یقینی بنانا چاہیے۔ تمام فرقوں اور گروہوں کو چاہیے کہ وہ اجتماعی شکل میں تعمیر نو کا عمل شروع کریں اور نقل مکانی کر جانے والے بے گھر افراد کو بھی اپنے خاندانوں کی طرف لوٹنا چاہیے"۔

ظریف کے مطابق اِدلب کے بقیہ حصّوں کو باقی ماندہ دہشت گردوں سے پاک کیا جائے اور علاقے کو شامی عوام کے زیر کنٹرول واپس آنا چاہیے"۔

ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف پیر کی صبح تہران سے دمشق پہنچے تھے۔ ایرانی سرکاری ذریعے کے مطابق ظریف کی آمد کا مقصد اِدلب پر اُس حملے کے حوالے سے بات چیت کرنا ہے جس کی تیاری شامی فوج اس وقت کر رہی ہے۔ اِدلب شام میں اپوزیشن کا آخری اہم ترین گڑھ ہے۔

ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان بہرام قاسمی نے تہران میں ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ "وزیر خارجہ اس وقت شامی عہدے داران سے بات چیت کر رہے ہیں"۔ قاسمی کے مطابق اسلامی جمہوریہ ایران ،،، شامی حکومت کی سپورٹ کا سلسلہ جاری رکھے گی تا کہ دمشق اپنی سرزمین سے دہشت گردوں کا قلع قمع کر سکے۔ انہوں نے کہا کہ اِدلب میں شامی حکومت کی آئندہ مہم کے سلسلے میں بھی تہران کی جانب سے مشورے اور مدد پیش کی جائے گی۔