.

لاؤروف نے برطانوی وزیر دفاع کو "وزیر جنگ "قرار دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

روسی وزیر خارجہ سرگئی لاؤروف نے برطانیہ کے وزیر دفاع گیون ولیمسن کو برطانیہ کا "وزیر جنگ" قرار دیا ہے۔ لاؤروف کا یہ بیان ولیمسن کی جانب سے روس پر عائد کیے گئے الزام کے ایک روز بعد سامنے آیا ہے۔

برطانوی وزیر دفاع نے جمعے کے روز میونخ میں سکیورٹی کانفرنس سے خطاب کے دوران کہا تھا کہ ماسکو مغرب کو ہتھیاروں کی ایک نئی دوڑ کی جانب دھکیل رہا ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ روس خشکی اور سمندر میں "غیر قانونی سرگرمیاں" انجام دے رہا ہے۔ ولیمسن نے ماسکو سے مطالبہ کیا کہ وہ مغربی ممالک کے ساتھ اپنے تعلقات کو بات چیت کے ذریعے دوبارہ ترتیب دے۔

ادھر روسی وزیر خارجہ نے ہفتے کے روز مذکورہ کانفرنس میں موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے قطب شمالی میں سکیورٹی کی صورت حال سے متعلق گیون ولیمسن کے سوال کا جواب دیا۔ سرگئی لاؤروف کا کہنا تھا کہ "ہم ان اختیارات کو سمجھنا چاہتے ہیں جو قطب شمالی میں نیٹو اتحاد کو سونپے جائیں گے"۔

روسی وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ "جب آپ بعض لوگوں کی بات سنتے ہیں مثلا برطانوی وزیر جنگ ،،، معاف کیجیے گا میرا مطلب برطانوی وزیر دفاع ہے تو شاید آپ کو یہ تاثر ملے کہ نیٹو اتحاد کے سوا کسی کو یہ حق نہیں کہ وہ کسی بھی جگہ موجود ہو"۔

لاؤروف اور ولیمسن کے درمیان لفظوں کی یہ پہلی جھڑپ نہیں ہے۔ گزشتہ برس ولیمسن نے کہا تھا کہ روس پر لازم ہے کہ وہ دور ہو کر اپنی زبان بند رکھے۔ اس پر لاؤروف نے جواب میں کہا تھا کہ برطانوی وزیر دفاع میں "شاید تعلیم کی کمی ہے"۔