نیوزی لینڈ: دہشت گرد کا تیسرا ہدف بچوں کا 'نرسنگ اسکول' تھا:ذرائع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

نیوزی لینڈ میں موجود'العربیہ' کی ٹیم کو معلوم ہوا ہے کہ 15 مارچ کو کرائیسٹ چرچ میں دو مساجد میں نمازیوں کوشہید کرنے والا دہشت گرد مسجد سے متصل بچوں کےایک نرسنگ مرکز کو بھی نشانہ بنانا چاہتا تھا۔ پولیس کے ہاتھوں پکڑے جانے کے باعث وہ اپنے تیسرے ٹارگٹ میں ناکام رہا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق دوران تفتیش دہشت گرد سے ملنے والی معلومات میں بتایا گیا ہے کہ النور مسجد سے متصل 'النور چلڈرن نرسنگ کیئرسینٹر' تھا جس میں کئی بچے موجود تھے۔

یہ نرسنگ اسکول اردن سے تعلق رکھنے والے اردنی شہری علیان مشید کی اہلیہ چلا رہی تھیں۔ دہشتگردی کے واقعے کے بعد وہ اسکول بند ہے۔

چار روز قبل نیوزی لینڈ کے انسپکٹر جنرل پولیس مائیکل بش نے کہا تھا کہ دو مساجد میں 50 نمازیوں کو شہید کرنے والادہشت گرد ایک تیسرے ٹارگٹ کی طرف بھی بڑھنا چاہتا تھا مگرانہوں نے اس تیسرے ہدف کے بارے میں تفصیلات نہیں بتائیں۔

نیوزی لینڈ میں دو مساجد میں دہشت گردی کے واقعے کو دوسرا ہفتہ شروع ہے اور ملک ابھی تک اس صدمے سے باہر نہیں‌آسکا۔

گذشتہ جمعہ کو نیوزی لینڈ ی مساجد میں جمعہ کی اذان براہ راست نشر کی گئی۔ وزیراعظم جیسنڈا ارڈرن اور حادثے میں زخمی ہونے والے مسلمانوں کے ہمراہ ایک بڑے میدان میں آئیں جہاں مسلمانوں اور دیگر مذاہب کے ہزار ہا افراد موجود تھے۔ اس موقع پر دہشت گردی کے واقعے کی یاد میں دو منٹ کی خاموشی اختیار کی گئی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں