سری لنکا: خونی حملے کرنے والے خود کش بم باروں کے سربراہ نے خود کو کہاں اڑایا ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سری لنکا کے نائب وزیر دفاع روان وجے واردن نے انکشاف کیا ہے کہ اتوار کے روز سری لنکا میں دھماکے کرنے والی شدت پسند جماعت کے سربراہ نے دارالحکومت کولمبو کے شنگریلا ہوٹل میں خود کو دھماکے سے اڑؑایا۔

بدھ کے روز ایک پریس کانفرنس میں انہوں نے کہا کہ اتوار کے روز حملے کرنے والے خود کش بم باروں کا تعلق ایک شدت پسند تنظیم "التوحید الوطنیہ الاسلامیہ" سے منحرف ہو جانے والے گروپ سے ہے۔

وجے واردن کے مطابق حکام اس بات کی تحقیقات کر رہے ہیں کہ آیا اس منحرف گروپ سے تعلق رکھنے والے دیگر افراد بھی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اتوار کے روز ایسٹر کے موقع پر دھماکے کرنے والے نو خود کش بم باروں میں ایک خاتون بھی شامل ہے۔

وجے واردن نے یہ بھی بتایا کہ دھماکوں کے ایک حملہ آور نے برطانیہ اور سری لنکا میں تعلیم حاصل کی۔

اتوار کے روز ہوٹلوں اور گرجا گھروں کو لپیٹ میں لینے والے دھماکوں میں کم از کم 359 افراد ہلاک اور سیکڑوں زخمی ہوئے۔

یاد رہے کہ داعش تنظیم نے ان خونی حملوں کی ذمے داری قبول کرتے ہوئے ایک بیان میں "سات" حملہ آوروں کے نام جاری کیے تھے۔

تاہم بعد ازاں اعماق ایجنسی کی ویب سائٹ پر ایک وڈیو ٹیپ جاری کیا گیا۔ اس میں 8 حملہ آوروں کو دکھایا گیا جن میں 7 نقاب پوش تھے۔ یہ تمام افراد داعش تنظیم کے سربراہ ابو بکر البغدادی کی بیعت کا اعلان کر رہے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں