.

کراچی، دہلی، ڈھاکا، دمشق اور طرابلس رہائش کے لیے ’’بدترین‘‘ شہر قرار

تین عرب دارالحکومت بھی قیام کے لیے غیر معیاری شہروں کی فہرست میں شامل ، ویانا مسلسل دوسرے سال بہترین شہر قرار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دنیا بھر میں جہاں اعلیٰ معیار کی بنیادی سہولتوں سے آراستہ دارالحکومت اور شہر موجود ہیں، وہیں ایسے دارالحکومت بھی موجود ہیں جہاں بنیادی سہولتوں کا فقدان ہے اور وہ رہائش کے لیے غیر معیاری سمجھے جاتے ہیں۔

آسٹریا کا شہر ویانا مسلسل دوسرے سال دنیا کا بہترین اور معیاری شہر قرار دیا گیا ہے جب کہ عرب دنیا میں شام کے دارالحکومت دمشق اور لیبیا کے طرابلس کو غیرمعیاری دارالحکومت قرار دیا گیا ہے۔ اسی طرح پاکستان کا شہر کراچی، بھارت کا نئی دہلی، بنگلہ دیش کا ڈھاکا اور مصر کا دارالحکومت قاہرہ جرائم، بدامنی، لاقانونیت اور بنیادی سہولتوں کی عدم دستیابی کی زندہ مثال قرار دیے گئے ہیں۔

دی اکنامسٹ سیف سٹی انڈیکس کی درجہ بندی میں ویانا کو اس کی معیاری سہولیات کی بدولت دوسرے سال بھی بہترین شہر اور دارالحکومت قرار دیا گیا۔

فہرست مرتب کرنے والے منتظمین کا کہنا ہے کہ ویانا میں بنیادی ڈھانچا، صاف وشفاف ہوا، ثقافت اور کلچر، تعلیم اور صحت کی بنیادی سہولتیں مثالی ہیں جو مستحکم رہائش کے لیے انتہائی موزوں ہے۔

بنیادی سہولیات کے اعتبار سے ویانا کو دوسرے سال 100 پوائنٹ میں سے 99 اعشاریہ 1 پوائنٹس حاصل ہوئے۔ آسٹریلیا کا شہر میلبورن 98 اعشاریہ 4 پوائنٹس کےساتھ دوسرے اور اسی ملک کا شہر سڈنی 98 اعشاریہ ایک پوائنٹ کےساتھ تیسرے نمبر پر رہاہے۔

اسی طرح آسٹریلیا اور کینیڈا کا شمار ان 10 ملکوں میں ہوتا ہے جن میں بہترین اور صاف ستھرے شہر پائے جاتے ہیں۔ ٹاپ 10 میں جاپان کا دارالحکومت ٹوکیو، شہر اوساکا، اور ڈنمارک کا دارالحکومت کوپن ہیگن بھی شامل ہیں۔

پیرس گذشتہ برس کی نسبت 6 پوائنٹس پیچھے چلا گیا۔ اس بار فرانس میں زرد صدری تحریک کے باعث پیرس کا شمار 25 ویں بہترین دارالحکومت میں کیا گیا ہے۔

انڈیکس میں ہرسال 140 دارالحکومتوں کی 100 پوائنٹس کے ساتھ درجہ بندی کی جاتی ہے۔ اس میں ان شہروں کی معیشت، جرائم کی شرح، پبلک ٹرانسپورٹ کی سہولتوں، سڑکوں اور بنیادی ڈھانچے، تعلیم، بنیادی صحت اور معاشی اور سیاسی استحکام کو جانچا جاتا ہے۔

آلودگی کی وجہ سے بھارت کا دارالحکومت نئی دہلی اور مصر کا قاہرہ غیرمعیاری دارالحکومتوں میں شامل کیے گئے ہیں۔لندن اور نیویارک کو جرائم میں اضافے کی وجہ سے خطرناک شہروں میں شامل کیا گیا۔ لندن کو فہرست میں 48 ویں اور نیویارک کو 58 ویں نمبر پر رکھا گیا۔

آخری درجے کے شہروں میں دمشق، لاگاس، ڈھاکا، طرابلس اور پاکستان کا سب سے بڑا شہر کراچی شامل ہیں۔