چینی صدرشی کی دو ہفتے کے بعد امریکا کے نومنتخب صدر جوبائیڈن کو مبارک باد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

چین کے صدر شی جین پنگ نے بالآخر امریکا کے نومنتخب صدر جو بائیڈن کو حالیہ صدارتی انتخابات میں کامیابی پر مبارک باد پیش کردی ہے۔

صدر شی نے جو بائیڈن کے نام ٹیلی گرام کے ذریعے تہنیتی پیغام بھیجا ہے اور اس میں کہا ہے کہ ’’ دونوں ملکوں کو تنازع یا کشیدگی میں نہیں الجھنا چاہیے،باہمی احترم اور دنیا میں امن اور ترقی کے فروغ کے لیے برابری کی بنیاد پر تعاون کرنا چاہیے۔‘‘

چینی صدر نے امریکا میں تین نومبر کو منعقدہ صدارتی انتخابات کے دو ہفتے کے بعد جو بائیڈن کو ان کی کامیابی پر مبارک باد کا یہ پیغام بھیجا ہے۔ان سے قبل دنیا کے متعدد لیڈر انھیں مبارک باد پیش کرچکے ہیں۔

امریکا اور چین کے درمیان دوطرفہ تعلقات میں سردمہری پائی جارہی ہے۔حالیہ مہینوں کے دوران میں دونوں ملکوں کے درمیان تجارت سمیت مختلف امور پر سخت کشیدگی پائی جارہی ہے۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور ان کے وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے چین کے خلاف متعدد سنگین الزامات عاید کیے ہیں اور ان پر امریکیوں کی جاسوسی کے علاوہ کرونا وائرس سے متعلق معلومات کو چھپانے اور انسانی حقوق کی پامالیوں کے سنگین الزامات عاید کیے ہیں۔

امریکا نے چین پر یہ سنگین الزام بھی عاید کیا تھا کہ اس نے گذشتہ سال دسمبر میں ووہان میں کرونا وائرس کی وبا پھیلنے کے بعد سے شفافیت کا مظاہرہ نہیں کیا تھا اور اس سے متعلق معلومات کو چھپایا تھا جس کی وجہ سے دنیا کے دوسرے ممالک کو اس مہلک وائرس پر قابو پانے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

شی جین پنگ نے اپنے پیغام میں مزید کہا ہے کہ ’’امریکا اور چین کے درمیان عوام کے بنیادی مفادات کےاحترام میں صحت مند اور مستحکم دو طرفہ تعلقات ناگزیر ہیں۔‘‘

چین کے نائب صدر وانگ قشین نے بھی الگ سے اپنی نومنتخب امریکی ہم منصب کمالا ہیرس کو انتخابات میں ان کی کامیابی پر مبارک باد کا پیغام بھیجا ہے۔

چین نے قبل ازیں 13 نومبر کو جو بائیڈن اور کمالا ہیرس کو صدارتی انتخابات میں جیت پر پھسپھسا سا تہنیتی پیغام دیا تھا۔تب چینی وزارتِ خارجہ کے ترجمان وانگ وین بین نے معمول کی نیوزبریفنگ میں کہا تھا کہ ’’ہم یہ بات سمجھتے ہیں کہ امریکا کے صدارتی انتخابات کے نتائج کی امریکی قانون اور طریق کار کے مطابق تصدیق کی جائے گی۔‘‘

مقبول خبریں اہم خبریں