.

مارا ڈونا کی موت سے متعلق اس کے وکیل کے چونکا دینے والے انکشافات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ارجنٹائنی فٹ بالر ڈیاگو مارا ڈونا کے چاہنے والے اپنے لیجنڈ کی موت کے صدمے سے اس وقت تک آگاہ نہیں تھے جب تک اس کے وکیل کی طرف سے آنجہانی اسٹار کی زندگی کے آخری گھنٹوں کے بارے میں تفصیلات سامنے نہیں آئیں۔ ماراڈونا کے وکیل کی طرف سے اس کے موکل کی موت کے حوالےسے لرزہ خیز انکشافات کیے گئے ہیں۔

جمعرات کے روز ماراڈونا کے وکیل میتھیس مورلا نے اعلان کیا کہ وہ فٹ بال اسٹار کی موت کی مکمل تحقیقات کی درخواست کریں گے۔ انہوں ‌نے ماراڈونا کی موت کی تحقیقات کے حوالے سے لاپرواہی اور سستی برتنے پر ایمرجنسی سروس کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

خبر رساں اداروں کے مطابق 60 سالہ ماراڈونا بدھ کے روز بیونس آئرس کے شمال میں ٹگرے میں واقع اپنے گھر پر دل کا دورہ پڑنے کے بعد انتقال کر گئے تھے۔ سابق فٹ بال کھلاڑی صحت کے مختلف مسائل میں مبتلا تھے اور کچھ ہفتے قبل ان کے دماغ میں خون جمع ہونے کے بعد اس کا آپریشن بھی کیا گیا تھا۔

میتھیس مورلا نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر ایک بیان میں کہا کہ جس چیز کی وضاحت نہیں کی جا سکتی ہے وہ یہ ہے کہ میرا دوست موت کے بعد 12 گھنٹے بعد بھی ایمرجنسی سروسز کے مقرر اور مجاز اہلکاروں کی طرف سے پڑا رہا اور اس کی موت کی کسی نے جانچ نہیں کی۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایمبولینس کو پہنچنے میں آدھے گھنٹے سے زیادہ وقت لگا جو ایک مجرمانہ حماقت ہے۔ اس حقیقت کو "نظر انداز" نہیں کیا جانا چاہیئے۔ وہ اس معاملے کی مکمل تحقیقات چاہتے ہیں کہ ایسا کیوں ہوا؟۔

اس کے علاوہ ارجنٹائنی میڈیا نے انکشاف کیا کہ ڈیاگو ماراڈونا کی موت حرکت قلب بند ہونے کے باعث ہوئی۔ ابتدائی تحقیقات سے پتا چلتا ہے کہ فٹ بالر کے پھیپھڑوں نے کام کرنا چھوڑ دیا تھا جس کے نتیجے میں ان کے دل پر دبائو پڑا اور وہ دم توڑ گئے۔ فرانزک ڈاکٹروں نے آنجہاںی فٹ بالر کا دو گھنٹے تک پوسٹ مارٹم کیا ہے۔

موت کی وجوہات کا پتہ لگانے کے لیے پوسٹ مارٹم کی درخواست کی گئی، کیوں کہ حکام کو بدھ کی سہ پہر ساڑھے ایک بجے یعنی منگل کی رات گیارہ بجے ہونے والی موت کے 13 گھنٹے 20 منٹ بعد اس کی موت کی اطلاع دی گئی تھی۔