.

عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں 32 ماہ کی بلند ترین سطح پرآگئیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پیر کو امریکی خام تیل کی عالمی منڈی میں قیمت 32 ماہ کی بلند ترین سطح پر آگئی۔ دوسری طرف کرونا وائرس کی ویکسین متعارف کروانے کے بعد امریکا اور یورپ میں تیل کی طلب اضافہ ہوا ہے۔

’یو ایس ٹیکساس انٹرمیڈیٹ‘ خام تیل فی بیرل صفر اعشاریہ پانچ فی صد اضافے کے بعد 0.5 71 پر پہنچ گئی ہے۔ اکتوبر 2018 کے بعد سب عالمی منڈی میں تیل کی یہ بلند ترین سطح ہے۔ برینٹ نے کی قیمت 73 ڈالر فی بیرل کی حد عبور کرگئی ہے۔

سی بی ایس نیوز کے ایک سروے کے مطابق امریکی وسیع پیمانے ویکسین کی فراہمی کے بعد پہلی مرتبہ امریکا میں روزانہ ہوائی جہازوں سے مسافروں کی تعداد بیس لاکھ تک پہنچ گئی ہے۔ سروے کے مطابق امریکی معاشرتی سرگرمیوں میں تیزی لوگوں کے کام پر واپس آنے اور بڑےپیمانے پر تقاریب کے انعقاد سے تیل کی طلب میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

امریکی خاتم تیل پانچویں سہ ماہی سیزن میں آگے بڑھ رہا ہے۔ 2010 کے بعد سے اس کی بہترین کارکردگی ظاہر ہو رہی ہے۔ تیل کی قیمتوں میں اضافہ کرونا وبا کی وجہ سے تیل پیدا کرنے والے ملکوں کی طرف سے عاید کی گئی پابندیوں میں نرمی کا نتیجہ ہے۔

بین الاقوامی توانائی ایجنسی نے گذشتہ ہفتے پیش گوئی کی تھی کہ عالمی سطح پر تیل کی طلب اگلے سال کے آخر میں بڑھ جائے گی۔ ایجنسی نے اوپیک اور اس کے شراکت داروں پر زور دیا کہ وہ تیل کی پیدوار کی کمی پوری کرنے کے ساتھ تیل مارکیٹ میں توازن قائم رکھیں۔