سوڈان میں جامع مکالمے اور مظاہرین کے تحفظ کا مطالبہ کرتے ہیں : امریکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا نے ایک بار پھر سوڈان میں سیاسی قیادت اور ذمے داران پر زور دیا ہے کہ وہ اقتدار کی جمہوری منتقلی کے حوالے سے جامع مکالمے کا اجرا کریں۔

وزیر خارجہ اینٹنی بلینکن کی معاون برائے افریقی امور مولی وی نے ہفتے کے روز ایک بیان میں بتایا کہ انہوں نے سوڈان میں شہری قیادت اور خود مختار کونسل کے ارکان کے ساتھ ملاقات کی۔ اس کا مقصد امریکی پالیسی کو واضح کرنا تھا۔

خاتون عہدے دار کے مطابق انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ سوڈانی سیکورٹی فورسز کی جانب سے مظاہرین کے خلاف طاقت کا استعمال روکے بغیر اور اس میں ملوث افراد کے محاسبے کے بغیر امریکا دونوں ملکوں کے بیچ تعلقات کا دائرہ ہر گز وسیع نہیں کرے گا۔

دوسری جانب اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گوٹیرس نے جمعے کے روز سوڈانیوں کے بیچ مکالمے پر زور دیا۔ انہوں نے باور کرایا کہ اقوام متحدہ انتخابات کے اجرا تک عبوری عرصے کو سپورٹ کرے گی۔ ساتھ ہی انہوں نے شہری حکومت کی تشکیل کا عمل تیز کرنے پر زور دیا۔

یاد رہے کہ رواں ماہ تین جنوری کو سوڈانی وزیر اعظم عبداللہ حمدوک کے مستعفی ہونے کے بعد سے جلد از جلد ایک شہری حکومت کی تشکیل تیز کر دینے کے حوالے سے بین الاقوامی مطالبات سامنے آ رہے ہیں۔ ایسی حکومت جو بعد ازاں 2019ء کی آئینی دستاویز کے مطابق ملک میں انتخابات کے اجرا کی راہ ہموار کرے۔

ادھر عبداللہ حمدوک اور مسلح افواج کے سربراہ عبدالفتاح البرہان کے بیچ 21 نومبر 2021ء کو دستخط ہونے والے معاہدے کے خلاف عوامی احتجاج کا سلسلہ جاری ہے۔

گذشتہ برس 25 اکتوبر کو سوڈانی فوج نے غیر معمولی اقدامات کرتے ہوئے عبداللہ حمدوک کی سابقہ حکومت کو تحلیل کر دیا تھا۔ اس کے بعد سے ملک میں جاری احتجاج اور ہنگامہ آرائی میں اب تک 60 کے قریب مظاہرین ہلاک ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں