یونانی وزیراعظم مِتسوتاکیس کاامریکی دورے کے بعد میرے لیےکوئی’’وجود‘‘نہیں:طیب ایردوآن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ترک صدررجب طیب ایردوآن نے یونان کے وزیراعظم کیریاکوس مِتسوتاکیس کے امریکا کے حالیہ دورے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ یونانی لیڈر کا اب ان کے لیے کوئی وجود نہیں رہا ہے۔انھوں نے وزیراعظم پرانقرہ کو ایف 16 لڑاکا طیاروں کی فروخت روکنے کی کوشش کا الزام عاید کیا ہے۔

صدرایردوآن نے سوموار کو ایک نیوزکانفرنس میں کہا کہ ’’ہم نے یونان کے ساتھ اپنے تنازع میں کسی تیسرے ملک کوشامل نہ کرنے پراتفاق کیاتھا۔اس کے باوجود یونانی وزیراعظم نے گذشتہ ہفتے امریکا کا دورہ کیا تھا،کانگریس کے ارکان سے بات چیت کی تھی اورانھیں خبردار کیا تھا کہ وہ ہمیں ایف 16 لڑاکا جیٹ نہ دیں‘‘۔

تاہم ترک صدر نے کہا کہ انھیں یہ توقع نہیں تھی کہ امریکا ایف 16 کی فروخت کے بارے میں کوئی فیصلہ کرتے وقت مِتسوتاکیس کی رائے کو مدنظررکھے گا۔

واضح رہے کہ ترکی نے گذشتہ سال اکتوبرمیں واشنگٹن سے لاک ہیڈ مارٹن کے ساختہ 40ایف 16 لڑاکا طیارے خریدکرنے کی درخواست کی تھی۔امریکی محکمہ خارجہ نے گذشتہ ماہ کانگریس کو ایک خط لکھا تھا جس میں یہ کہاگیا تھا کہ وہ اس فروخت کی منظوری دے کیونکہ اس سےامریکا کے قومی مفاد اور نیٹو اتحاد کے مفاد کی تکمیل ہوگی۔

صدر ایردوآن نے مزید کہا:’’وہ (مِتسوتاکیس) اب میرے لیے موجود نہیں رہے ہیں۔ میں ان سے ملاقات پر کبھی راضی نہیں ہوں گا۔ البتہ ہم معززسیاست دانوں کے ساتھ اپنا راہ ورسم جاری رکھیں گے‘‘۔

ترکی کی سرکاری خبررساں ایجنسی اناطولوکی رپورٹ کے مطابق صدرایردوآن نے یونان کے ساتھ تزویراتی کونسل کا اجلاس منسوخ کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔

واضح رہے کہ بحرمتوسط (بحیرہ روم) کے مشرقی حصے میں ترکی کے تیل اور گیس کی تلاش کےمجوزہ منصوبوں پر دونوں ہمسایہ ملکوں میں اختلافات پائے جاتے ہیں اور ان کی وجہ سے 2020 سے نیٹواتحاد کے دونوں رکن ممالک یونان اور ترکی کے درمیان کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے۔

اس کے علاوہ دونوں میں فضائی اور سمندری سرحدی تنازعات کا سلسلہ بھی رہا ہے۔گذشتہ ماہ ایتھنز اورانقرہ نے ایک دوسرے پر لڑاکا طیاروں کے ساتھ فضائی حدود کی خلاف ورزیوں کے الزامات عاید کیے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں