القاعدہ کے رہنما ایمن الظواہری کو ڈرون حملے میں ہلاک کر دیا گیا: صدر بائیڈن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
7 منٹس read

امریکہ کے صدر جو بائیڈن نے وائٹ ہاوس سے خصوصی خطاب کے دوران اعلان کیا ہے کہ القاعدہ کے رہنما ایمن الظواہری کو افغانستان کے اندر ہونے والے ایک ڈرون حملے میں ہلاک کر دیا گیا ہے۔

صدر بائیڈن نے قوم کو بتایا کہ نائن الیون میں زندگی سے محروم ہونے والے معصوم امریکیوں کو کبھی فراموش نہیں کیا جائے گا اور الظواہری کی ہلاکت ثابت کرتی ہے کہ ہم اپنے عزم پر قائم ہیں اورایمن الظواہری کے ساتھ انصاف ہو گیا ہے۔

صدر نے کہا کہ الظواہری نیروبی سے لے کر افغانستان تک، امریکہ کے عوام، اس کے سفارتکاروں ، فوجیوں اور اس کے مفادات کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی کرنے والوں میں شامل رہے ہیں۔

صدر بائیڈن نے تصدیق کی کہ انہوں نے گذشتہ ہفتے افغانستان کے اندر خصوصی ڈرون آپریشن کی منظوری دی تھی اور اس بات کو یقینی بنایا گیا کہ کسی عام شہری، بشمول الظواہری کے خاندان کے افراد کے کسی کی زندگی کو نقصان نہ پہنچے۔

امریکہ کے صدر نے کہا کہ انہوں نے کاونٹر ٹیررازم فورس کے اس پلان پر کافی غور وخوض کے بعد اس کی منظوری دی اور اس کے لیے گانگریس کے اراکین کو بھی اعتماد میں لیا گیا۔

صدر بائیڈن نے کہا کہ افغانستان سے انخلا کے وقت بھی میں نے امریکہ کے عوام سے وعدہ کیا تھا کہ ہم افغانستان کو دہشت گردوں کی پناہ گاہ نہیں بننے دیں گے۔ صدر نے اس موقع پر امریکہ کی انٹیلی جنس کمیونیٹی اور انسداد دہشت گردی فورسز کی خدمات کو بھی سراہا۔

صدر نے کہا کہ اہداف کو نپے تلے انداز میں نشانہ بنانے والے ڈرون حملوں سے ہم نے، الظواہری سے قبل، گزشتہ ماہ داعش کے ایک بڑے لیڈر کو بھی انجام تک پہنچایا ہے۔

کابل میں ایمن الظواہری کا مشتبہ مکان
کابل میں ایمن الظواہری کا مشتبہ مکان

امریکہ کے صدر نے باور کرایا کہ دہشت گرد یہ جان لیں کہ وہ امریکہ کے لوگوں اور ا س کے مفادات کو نقصان پہنچائیں گے تو وہ کہیں بھی ہوں گے، جتنا بھی چھپ لیں، ان کو کیفرکردار تک پہنچایا جائے گا۔ اور ان کے بقول ہم وہ سب کریں گے جس سے امریکہ کے شہری ملک کے اندر اور دنیا بھر میں محفوظ رہ سکیں۔

ایک امریکی اہلکار نے خبر رساں ادارے’رائیٹرز’ کوبتایا کہ خیال کیا جاتا ہے کہ الظواہری ہفتے کے آخر میں افغانستان میں امریکی انٹیلی جنس کے ایک فضائی حملے میں مارے گئے تھے۔ ادھر العربیہ/الحدث ذرائع نے طالبان کے وزیر داخلہ سراج الدین حقانی کے 2 معاونین اور متعدد عرب جنگجوؤں کی ہلاکت کی اطلاع دی۔

العربیہ/الحدث کے نمائندے نے بتایا کہ الظواہری کو اس وقت نشانہ بنایا گیا جب وہ کابل میں اپنے گھر کی بالکونی میں تھے۔ اخبار "واشنگٹن پوسٹ" کے مطابق الظواہری دارالحکومت کے سفارتی انکلیو المعروف گرین زون میں ایک گھر میں موجود تھے۔

میزائل حملہ

تجزیہ کاروں نے "نیو یارک ٹائمز" کو وضاحت کی کہ سوشل میڈیا پر شائع ہونے والے حملے کی تصاویر ظاہر کرتی ہیں یہ حملہ RX9 کے میزائل حملے طرز کے میزائل سے کیا گیا جو ایک ہیل فائر میزائل جس میں لمبے بلیڈ ہیں جو متحرک توانائی کے اہداف کو مارنے کے لیے ڈیزائن کیے گئے ہیں تاکہ اہم کولیٹرل نقصان کو کم کیا جا سکے۔

پیر کو پہنچنے والے تین امریکی عہدیداروں نے یہ بھی کہا کہ یہ حملے محکمہ دفاع یا امریکی سنٹرل کمانڈ نے نہیں کیے، جو افغانستان کے لیے ذمہ دار لڑاکا کمانڈ ہے۔ اسے یہ امکان ظاہر کیا جا سکتا ہے کہ یہ کارروائی ’سی آئی اے‘ کی جانب سے کی گئی ہو۔

ایک سینئر امریکی اہلکار نے پیر کو اعلان کیا تھا کہ امریکا نے افغانستان میں "القاعدہ کے ایک اہم ہدف" کے خلاف "کامیاب" آپریشن کیا ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہفتے کے آخر میں امریکا نے دہشت گردی کے خلاف جنگ کے تناظر میں افغانستان میں القاعدہ کے ایک اہم ہدف کے خلاف آپریشن کیا۔

کامیاب آپریشن

خبر رساں ادارے"اے ایف پی" کے مطابق انہوں نے نشاندہی کی کہ "آپریشن کامیاب رہا اور کوئی شہری ہلاکت نہیں ہوئی۔" متوازی طور پر دو امریکی اہلکاروں نے آج رائیٹرز کو بتایا کہ سینٹرل انٹیلی جنس ایجنسی نے ہفتے کے آخر میں افغانستان میں ڈرون حملہ کیا۔

ان دونوں اہلکاروں جنہوں نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بات کی مزید کہا کہ یہ کارروائی اتوار کو کابل میں ہوئی۔ انہوں نے ٹارگٹ کی تفصیلات یا جانی نقصان نہیں بتایا۔ سی آئی اے نے تبصرہ کرنے سے انکار کردیا۔

طالبان کی مذمت

طالبان نے اس فضائی حملے کی مذمت کی ہے جس میں مبینہ طور پرالقاعدہ کے رہ نما ایمن الظواہری کی ہلاکت ہوئی تھی۔ انہوں نے کہا کہ امریکی حملہ دارالحکومت کابل کے علاقے شیرپور میں ایک گھر پر ڈرون کے ذریعے کیا گیا۔

افغانستان میں طالبان حکومت کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے ایک بیان جاری کیا ہے جس میں افغانستان کے اندر ڈرون حملے کی یہ کہہ کر مذمت کی ہے کہ وجہ کچھ بھی ہو، اس طرح کا حملہ ان کے الفاظ میں، بین الاقوامی قوانین اور دوحہ معاہدے کی صریحاً خلاف ورزی ہے۔

اس حملے کو افغانستان کی خودمختاری کی خلاف ورزی اور دوحہ معاہدے سے متصادم بھی قرار دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ آپریشن افغانستان میں امریکا کے مفادات سے مطابقت نہیں رکھتا۔

الظواہری کی موت کی خبریں

یہ بات قابل ذکر ہے کہ الظواہری نے 2011 میں اسامہ بن لادن کی امریکی فورسز کے ہاتھوں پاکستان میں گہرائی میں رات کے گہرے چھاپے میں ہلاکت کے بعد القاعدہ کی قیادت سنبھالی تھی۔

نومبر 2020 میں بیماری کے ساتھ جدوجہد کے بعد ان کی موت کی خبر پھیل گئی، کیونکہ ایسی اطلاعات تھیں کہ انہیں جگر کا کینسر تھا اور دیگر رپورٹس کہ انہیں دمہ ہے۔ یہ پہلا موقع ہے جب وہ تنظیم کی طرف سے شائع ہونے والی ویڈیو میں نظر آئے۔

الظواہری نے ستمبر 2021 میں امریکا میں 11 ستمبر کے دہشت گردانہ حملوں کی 20 ویں برسی کے موقع پر، اپنی موت کے بارے میں افواہوں کو دور کرنے کی بہ ظاہر کوشش میں نئی ویڈیو فوٹیج جاری کی۔

یاد رہے کہ القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کو امریکہ کی سپیشل فورسز نے ایبٹ آباد میں 2 مئی2011 میں ایک آپریشن میں ہلاک کر دیا تھا۔ اور اس کے بعد الظواہری نے دہشت گرد قرار دیے جانے والی تنظیم کی قیادت سنبھال لی تھی۔ القاعدہ وہ تنظیم ہے جس کو امریکہ کے شہر نیویارک پر نائن الیون کے دہشت گرد حملوں کی افغانستان کے اندر بیٹھ کر منصوبہ بندی کرنے کا ذمہ دار ٹھہرایا گیا تھا۔

ابھی گذشتہ دنوں اقوام متحدہ کے اینالیٹیکل سپورٹ اینڈ سینکشن مانیٹرنگ ٹیم کی جانب سے ایک رپورٹ ایف ڈی ڈی جرنل میں جاری کی گئی تھی جس میں بتایا گیا تھا کہ بن لادن کے بعد القاعدہ کے سربراہ ایمن الظواہری نہ صرف زندہ ہیں بلکہ بہت آسانی سے پیغام رسانی کی اہلیت بھی رکھتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں