چین کے مایوس کن اقتصادی اعدادوشمار؛عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں کمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چین کے مایوس کن اقتصادی اعدادوشماراورعالمی کساد بازاری کے خدشات کے پیش نظر پیرکو عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتوں میں 4 ڈالر فی بیرل سے زیادہ کی کمی واقع ہوئی ہے۔

جمعہ کو 1.5 فی صد کمی کے بعد برینٹ کروڈ کے مستقبل کے سودے دوپہر 1201 جی ایم ٹی تک 4.75 ڈالر یا 4.84 فی صد کی کمی سے 93.40 ڈالر فی بیرل میں طے پائے ہیں۔

2.4 فیصد کمی کے بعد امریکی ویسٹ ٹیکساس انٹرمیڈیٹ خام تیل 4.52 ڈالر یا 4.91 فی صد کی کمی کے ساتھ 87.57 ڈالر فی بیرل میں فروخت ہوا ہے۔

یو بی ایس کے تیل کے تجزیہ کارجیووانی سٹونوو کا کہنا ہے کہ میری نظرمیں تیل کی قیمت میں کمی کی وجہ منفی پہلو کی زیادہ مقدار ہے، پیرکو کمی کا محرک چین کےکمزوراعدادوشمار تھے۔

دنیا کے سب سے بڑے خام تیل درآمد کنندہ چین میں مرکزی بینک نے طلب کی بحالی کے لیے قرضوں کی شرح میں کمی کی کیونکہ اعدادوشمار سے پتاچلتا ہے کہ جولائی میں معیشت غیرمتوقع طور پرسست روی کا شکار تھی۔ نیز بیجنگ کی صفرکووِڈ پالیسی اور پراپرٹی بحران کی وجہ سے فیکٹری اور خوردہ سرگرمی دب گئی تھی۔

سرکاری اعداد و شمار سے پتاچلتا ہے کہ چین کی ریفائنری کی پیداوارایک کروڑ 25لاکھ (12.53 ملین) بیرل یومیہ (بی پی ڈی) تک گرگئی ہے اور یہ مارچ 2020 کے بعد سب سے کم ہے۔

آئی این جی بینک نے چین کی 2022 کی جی ڈی پی نمو کے بارے میں اپنی پیشین گوئی کو کم کرکے 4 فی صد کردیا ہے اوریہ 4.4 فی صد کے سابقہ تخمینے سے کم ہے۔اس نےخبردار کیا ہے کہ مزیدبھی کمی کا امکان ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں