ایران کے ساتھ سفارت کاری ناکام رہی تو عسکری محاذ کے لیے تیار ہیں:امریکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کل بُدھ کو وائٹ ہاؤس نے تصدیق کی کہ ایران کے ساتھ سفارت کاری فی الحال کام نہیں کر رہی ہے۔

وائٹ ہاؤس نے یہ بھی کہا ہے کہ "اگر ایران کے ساتھ سفارت کاری ناکام ہوتی ہے تو ہم خطے میں اپنی فوجی تیاری کو یقینی بنانے کےلیے تیار ہیں۔"

امریکا کی طرف سے یہ بیان ایرانی جوہری معاہدے کی بحالی کا معاملہ غیر واضح ہونے کے بعد سامنے آیا ہے۔ ایرانی وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے گذشتہ ہفتے ماسکو میں کہا تھا کہ ان کے ملک کو 2015 کے جوہری معاہدے کو بحال کرنے کے لیے واشنگٹن سے مضبوط ضمانتوں کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اقوام متحدہ کی بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی سیاسی بنیادوں پر ایران کی نیوکلیئرتنصیبات کی معائنہ کاری روکنا ہوگی۔

دو ہفتے قبل قومی سلامتی کونسل کے کمیونیکیشن کوآرڈینیٹر جان کربی نے تصدیق کی تھی کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے وزارتوں سے کہا تھا کہ وہ ایران کو جوہری ہتھیار حاصل کرنے سے روکنے کے لیے آپشن تیار کریں۔

اس سلسلے میں امریکی حکومت کے اندر اور باہر کے ذرائع نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو تقریباً متفقہ طور پر اس بات کی تصدیق کی کہ جو بائیڈن کے پاس تہران سے نمٹنے کے لیے بہت سے آپشنز موجود ہیں اور ان کا اہتمام اس طرح کیا گیا ہے: پہلے سفارتی عمل اور مذاکرات کو آگے بڑھایا جائے گا، دوسرا سخت پابندیاں عائد کرنے کا سہارا لینا جو تہران کو جوہری معاہدے میں باہمی واپسی کے عزم کو پیش کرنے پر مجبور کرتا ہے۔ تیسرا امریکی انٹیلی جنس کے کام کوآگےبڑھانا، برطانیہ اور اسرائیل جیسے اتحادیوں کے ساتھ مشترکہ کام کرنا اور چوتھا ایرانی تنصیبات پر بمباری کرنے کے فوجی منصوبے تیار کرنا ہے۔

اس کے علاوہ قومی سلامتی کونسل کے ترجمان نے زور دے کر کہا کہ امریکی انتظامیہ "ایران کو جوہری ہتھیار حاصل کرنے سے روکنے کے لیے پرعزم ہے۔ اس کے لیے سفارت کاری ہی بہتر راستہ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ "سفارت کاری کا راستہ ابھی بھی کھلا ہے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں