جاپانی وزیراعظم کا اماراتی صدر شیخ محمد سے جامع تزویراتی شراکت داری پرتبادلہ خیال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جاپان کے وزیراعظم فومیو کِشیدا خلیجی دورے کے دوسرے مرحلے میں پیر کے روز ابوظبی پہنچے ہیں۔ان کے اس دورے کا مقصد توانائی کی ترسیل کو محفوظ بنانا اور جاپان کی گرین ٹیکنالوجی کی میزبان ممالک کو پیش کش کرنا ہے۔

متحدہ عرب امارات کے سرکاری خبر رساں ادارے وام کے مطابق کِشیدا نے صدر شیخ محمد بن زاید آل نہیان سے ملاقات کی اور دونوں رہنماؤں نے متحدہ عرب امارات اور جاپان کے درمیان جامع تزویراتی شراکت داری پر تبادلہ خیال کیا ہے۔

دونوں رہ نماؤں کی موجودگی میں جاپانی اور اماراتی حکام مختلف شعبوں میں دوطرفہ تعاون کے فروغ کے متعدد معاہدوں اور سمجھوتوں پر دست خط بھی کرنے والے تھے۔

حکام کا کہنا ہے کہ توقع ہے کہ کِشیدا منگل کو گیس پیدا کرنے والے بڑے ملک قطر روانہ ہونے سے قبل متحدہ عرب امارات اور جاپان کے کاروباری فورم میں شرکت کریں گے۔

جاپان اس وقت فعال طور پر سبز اور قابل تجدید توانائی کی ٹیکنالوجیز تیار کر رہا ہے اور اس کا مقصد 2050 تک کاربن غیرجانبدار ہونا ہے۔وزیراعظم کِشیدا اس دورے میں جاپان کے سبزتوانائی کے علم سے بھی میزبان ممالک کو آگاہ کرنے کی کوشش کریں گے کیونکہ توانائی پیدا کرنے والے خلیجی ممالک نے بھی خالص صفر کا ہدف حاصل کرنے کا عہد کیا ہے۔ وہ خاص طور پر نومبر میں دبئی میں ہونے والےکوپ 28 موسمیاتی سربراہ اجلاس سے قبل اس سمت میں نمایاں پیش رفت کرنا چاہتے ہیں۔

ابوظبی کی نیشنل آئل کمپنی (اے ڈی این او سی) کے مطابق جاپان اپنے خام تیل کا قریباً 25 فی صد متحدہ عرب امارات سے درآمد کرتا ہے، جس سے یہ ایدنوک کا سب سے بڑا خریدار بین الاقوامی ملک بن گیا ہے۔

وام نے اتوار کوجاپانی وزیراعظم کا ایک مضمون شائع کیا تھا۔اس میں انھوں نے لکھا کہ "متحدہ عرب امارات کی جانب سے محفوظ توانائی کی ترسیل نے گذشتہ کئی سال سے جاپان کی اقتصادی ترقی میں مدد کی ہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں