قبرص میں قدیم تجارتی مرکز دریافت، مقبروں میں سے قیمتی اشیا بھی مل گئیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

قبرص میں ایک سویڈش مشن کی قیادت میں کھدائیوں سے بہت سارے ایسے نمونے ملے ہیں جو اس بات کی نشاندہی کر رہے ہیں کہ جنوبی ساحل پر واقع ایک قدیم بندرگاہی شہر لارنکا کانسی کے دور میں اس خطے میں ایک بڑا تجارتی مرکز موجود تھا۔

قبرص کے محکمہ آثار قدیمہ کے قائم مقام ڈائریکٹر ’’یوریوس یوریو‘‘ نے کہا کہ شہر کی دولت کا تعلق تانبے کی پیداوار اور قریب اور دور کی ثقافتوں کے ساتھ تجارت پر مبنی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ مدفون تحائف کو دیکھتے ہوئے کہا جا سکتا ہے کہ یہ مقبرے شہر کے حکمران طبقے کے خاندانوں کے ہیں۔ یہ لوگ یقیناً تانبے کی برآمدات اور بین الثقافتی تجارت میں سرگرم تھے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ ڈرومولاسیا- ویزاکیا میں کھدائی کی جگہ کانسی کے زمانے کے آخر میں ایک فروغ پزیر بندرگاہ تھی۔ کچھ مارین نے اندازہ لگایا کہ اس بندرگاہ کا حجم کم از کم 25 ہیکٹر تھا۔ یہ بستی 1600 اور 1100 قبل مسیح کے درمیان پروان چڑھی۔

اس کے حصے کے لیے گوتھن برگ یونیورسٹی نے گزشتہ ماہ اعلان کیا تھا کہ آخر کار اس نے کانسی کے دور کے تجارتی مرکز کے باہر مقبرے دریافت کر لیے ہیں۔

یہ بحیرہ روم کے علاقے میں پائے جانے والے امیر ترین مقبروں میں سے ایک ہیں۔ مقبروں میں موجود قیمتی نوادرات سے پتہ چلتا ہے کہ ان کا تعلق اس شہر کے حکمرانوں سے تھا۔ یہ علاقہ 1500 سے 1300 قبل مسیح کے درمیان تانبے کی تجارت کا مرکز تھا۔

آثار قدیمہ کے پروفیسر اور مہم کے رہنما پیٹر فشر نے کہا ہے کہ مقبروں کی دولت کو دیکھتے ہوئے یہ سمجھ میں آتا ہے کہ یہ شاہی مقبرے تھے۔ مقبرے زیرزمین چیمبروں پر مشتمل ہوتے ہیں جن تک رسائی سطح زمین سے ایک تنگ راستے کے ذریعہ ہوتی ہے۔

سویڈش مشن 2010 سے تکیہ ہالا سلطان کے آس پاس کی کھدائی کر رہا ہے ۔ اس سے قبل اس مشن کو تدفین کے کمرے ملے تھے۔ مشن نے کہا ہے کہ ہمیں 500 سے زیادہ دستکاری کی اشیا اور مکمل ٹکڑے ملے جو دو مقبروں پر تقسیم کیے گئے تھے۔

فشر نے یونیورسٹی کی ویب سائٹ پر بتایا کہ بہت سے نمونے قیمتی دھاتوں، قیمتی پتھروں، ہاتھی دانت اور اعلیٰ معیار کے سرامکس پر مشتمل ہیں۔ انہوں نے وضاحت کی کہ تقریباً نصف نمونے پڑوسی ثقافتوں سے درآمد کیے گئے تھے۔ سونا اور ہاتھی دانت مصر سے درآمد کیے گئے تھے۔

قیمتی پتھرجیسے نیلی لاپیس لازولی، گہرا سرخ کارنیلین، اور نیلا سبز فیروزہبالترتیب افغانستان، ہندوستان اور سینائی سے درآمد کیے گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں