تیز رفتاری اور بے پروائی سے گاڑی چلانے پر ڈرائیور کو عبرت ناک سزا،کار چکنا چور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

آسٹریلوی پولیس نے تیز رفتاری کو روکنے کے لیے کی جانے والی کارروائی میں 253 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے گاڑی چلانے والے شخص کی کار کو توڑ پھوڑ کر چکنا چور کردیا۔

’اے بی سی‘ نیوز کے مطابق تقریباً 20,000 ڈالر کی قیمت والی اس کار کی واٹر لو کارنر میں نارتھ- ساؤتھ ہائی وے پر 253 کلومیٹر فی گھنٹا رفتار ریکارڈ کی گئی۔

بے پروائی سے ڈرائیونگ کا واقعہ تقریباً 7 ماہ قبل جنوبی آسٹریلیا میں پیش آیا جب 20 سالہ ٹیرل باؤر ولیمز نے 110 کلومیٹر فی گھنٹا کے زون میں 253 کلومیٹر کی رفتار سے گاڑی چلا کر حد رفتار سے تجاوز کیا۔ نوجوان ڈرائیور کو پولیس کے تعاقب سے بچنے، غیر قانونی طور پر گاڑی چلانے اور ضمانت توڑنے سمیت متعدد جرائم میں گرفتار کیا گیا تھا۔ ٹیرل باؤر ولیمز کو آسٹریلوی قوانین کے تحت دھمکی آمیز ڈرائیونگ کے رویے پر قید کی سزا سنائی گئی۔

کار کو تباہ کرنے کے عمل کے دوران، جمعہ کو ایک پولیس اہلکار نے کہا کہ حادثہ "مکمل طور پر ناقابل قبول" تھا۔"یہ سب سے زیادہ رفتار ہے جو ہم نے جنوبی آسٹریلیا کی سڑکوں پر ریکارڈ کی ہے۔"

آسٹریلوی پولیس کے مطابق جنوبی آسٹریلیا کی سڑکوں پر ہونے والے مہلک حادثات میں سے ایک تہائی سے زیادہ کا سبب تیز رفتاری ہے۔

جنوبی آسٹریلیا کے قانون کے تحت تباہ کن حادثات کا سبب بننے والے بے پروا ڈرائیور گاڑیوں کو سزا کے طور پر فروخت کردیا جاتا ہے یا انھیں تباہ کردیا جاتا ہے۔

کار کو تباہ کرنے کے مراحل

ضبط کی گئی کچھ کاروں کو نیلام کیا جاتا ہے، جس سے حاصل ہونے والی رقم حادثات سے متاثرہ افراد کی امداد کے لیے قائم فنڈ کو دی جاتی ہے، جب کہ سڑک کے قابل یا ناقص سمجھی جانے والی گاڑیوں کو تباہ کر دیا جاتا ہے۔

آسٹریلیا کے پولیس وزیر نے کہا کہ گزشتہ سال 1500 افراد کو "مستقل طور پر اپنی گاڑیوں سے محروم کر دیا گیا"۔

آسٹریلوی بیورو آف انفراسٹرکچر، ٹرانسپورٹ اینڈ ریجنل اکنامکس کے اعداد و شمار کے مطابق اس سال حادثات میں 998 افراد ہلاک اور 40 ہزار کے قریب زخمی ہوئے ہیں۔

آسٹریلیا جیسے سخت ٹریفک قوانین اور حد رفتار کی خلاف ورزی پر ایسی سزا ٹریفک رولز کی خلاف ورزیوں کی روک تھام اور حادثات میں یقینی کمی کا ذریعہ بن سکتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں