فلسطین اسرائیل تنازع

امدادی ایجنسیوں کے دباؤ پر سوئٹزر لینڈ نے 'اونروا ' کے امدادی فنڈ بحال کر دیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

یورپی یونین کے رکن سوئٹزرلینڈ کی پارلیمنٹ کے ایوان بالا نے غزہ میں امدادی کام کرنےوالے ادارے کے حالیہ دنوں میں بلاک کر دیے گئے فنڈز ' اونروا ' کے لیے جمعرات کے روز بحال کر دیے ہیں۔ 'اونروا ' نامی امدادی ادارہ اقوام متحدہ کا ذیلی ادارہ پناہ گزینوں کی بحالی کا کام کرتا ہے اور اس کا دائرہ کار زیادہ تر مشرق وسطیٰ تک پھیلا ہوا ہے۔

پچھلے پیر کو سوئٹزرلینڈ کی نیشنل کونسل کے ایوان زیریں فیڈرل اسمبلی نے ایک بل منظور کرتے ہوئے ' اونروا ' کو دیے جانے والی رقم 23 ملین ڈالر روک دی تھی۔ یہ فیصلہ 78 کے مقابلے میں 116 ووٹوں سے کیا گیا تھا۔

لیکن اس پر کافی رد عمل دیکھنے میں آیا اور ' ڈونرز' اداروں نے اس فیصلے پر تنقید کی، جس کے بعد جمعرات کے روز نیشنل کونسل کے ایوان بالا نے 21 ووٹوں کے مقابلے میں 23 ووٹوں سے ' اونروا ' کے لیے فنڈز کو بحال کر دیا ہے۔

جنیوا میں پناہ گزینوں کی امداد کے لیے قائم ادارے گلوبل ریفیوجی فورم کے ذمہ دار نے امداد بحالی کے اس تازہ فیصلے پر رپورٹرز سے بات کرتے ہوئے کہا ' میں ذاتی طور پر خوش ہوا ہوں یہ ایک مثبت پیش رفت ہے۔ '

'اونروا' کے سربراہ لازا رینی نے کہا یہ اہم پیش رفت ہے کہ سوئٹزر لینڈ نے فلسطینیوں اور پورے خطے کے بے گھر لوگوں کے لیے امداد روک دینے کا فیصلہ واپس لے لیا ہے۔ غزہ کی پٹی پر یہ امدادی سامان کی فراہمی جاری رکھنے اور زندگیاں بچانے کے لیے یہ 20 ملین ڈالر بہت اہم ہیں۔

انہوں نے کہا فنڈز کو روکے جانے سے 'اونروا' کی کارکردگی یقیناً متاثر ہوتی ہے۔ لازا رینی نے اس سے قبل فنڈز روکنے کے فیصلے کی مذمت کی تھی اور اسے 'اونروا ' کی سرگرمیاں روکنے کی ایک کوشش قرار دیا تھا۔

واضح رہے 'اونروا ' ان دنوں اسرائیلی بمباری کے بعد تباہ شدہ غزہ کی پٹی پر لاکھوں بے گھر فلسطینیوں کی مدد کے لیے سرگرم ہے۔ غزہ کی پٹی پر 18600 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں جن میں بڑی تعداد بچوں اور خواتین کی ہے۔

غزہ میں ہونے والی بمباری سے 'اونروا' کے ستاف کے 130 ارکان بھی جاں بحق ہو چکے ہیں۔ جبکہ غزہ میں 85 فیصد سے زیادہ لوگ بے گھر ہو کر نقل مکانی کر چکے ہیں۔

اونروا کو پہلی عرب اسرائیل جنگ کے بعد 1949 میں قائم کیا گیا تھا۔ تاکہ یہ مغربی کنارے، اردن شام اور لبنان میں نقل مکانی کرنے والوں کو پناہ اور سہولیات دے سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں