غزہ میں 17 ہزار بچے والدین سے جدا ہو چکے ہیں: اقوام متحدہ

بعض بچوں کے والدین اور بعض کے تمام رشتہ دار جاں بحق ہو چکے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اقوامِ متحدہ نے جمعے کے روز کہا کہ اس کے اندازے کے مطابق غزہ کی پٹی میں چار ماہ پر محیط جنگ کے دوران کم از کم 17 ہزار بچے والدین سے جدا یا بالکل تنہا رہ گئے ہیں۔

اقوام متحدہ کے بچوں کے ادارے یونیسیف کے فلسطینی علاقوں میں ترجمان جوناتھن کرکس نے کہا، "ہر ایک کے پاس غم کی دل دہلا دینے والی داستان ہے۔"

انہوں نے بیت المقدس سے ویڈیو لنک کے ذریعے جنیوا میں ایک میڈیا بریفنگ میں بتایا، "بغیر والدین کے رہنے والے بچوں کی یہ تعداد بے گھر ہونے والے فلسطینوں کی مجموعی 17 لاکھ آبادی کے 1 فیصد کے مساوی ہے۔"

کرکس نے کہا کہ بچوں کا سراغ لگانا "انتہائی مشکل" ثابت ہو رہا تھا کیونکہ بعض اوقات جب انہیں زخمی یا صدمے کی حالت میں ہسپتال لایا جاتا تو وہ اپنے نام تک نہیں بتا سکتے تھے۔"

انہوں نے کہا کہ تنازعات کے دوران خاندانوں کے لیے اپنے والدین سے جدا ہو جانے والے بچوں کی دیکھ بھال کرنا عام بات تھی۔

کرکس نے کہا، البتہ غزہ میں "خوراک، پانی یا محفوظ مقام کی کمی کی وجہ سے خاندان خود پریشان ہیں اور انہیں فوری طور پر دوسرے بچے کی دیکھ بھال کرنے کے لیے چیلنجز کا سامنا ہے کیونکہ وہ خود اپنے بچوں اور خاندان کی ضروریات پوری کرنے کے لیے برسرِ پیکار ہیں۔"

انہوں نے کہا جنگ سے غزہ میں بچوں کی ذہنی صحت شدید متاثر ہو رہی ہے۔

انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا، "ان میں ایسی علامات ظاہر ہوتی ہیں مثلاً مسلسل اضطراب کی انتہائی بلند سطح، بھوک میں کمی، وہ سو نہیں پاتے، جب بھی وہ بم دھماکوں کی آوازیں سنیں تو وہ جذباتی جوش یا گھبراہٹ کا شکار ہو جاتے ہیں۔"

یونیسیف کے اندازے کے مطابق حالیہ تنازعہ شروع ہونے سے پہلے غزہ کی پٹی میں پانچ لاکھ سے زیادہ بچوں کو ذہنی صحت اور نفسیاتی-معاشرتی مدد کی ضرورت تھی۔

کرکس نے کہا، اب ادارے کا خیال ہے کہ "تقریباً تمام یعنی ایک ملین سے زیادہ بچوں کو اس طرح کی مدد کی ضرورت ہے"۔

کرکس نے کہا، "بچوں کا اس تنازعہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اس کے باوجود وہ ایسے مصائب کا شکار ہیں جن کا کبھی کسی بچے کو سامنا نہیں ہونا چاہیے۔"

"تشدد کی جو سطح 7 اکتوبر کو دیکھی گئی یا جو ہم نے اس وقت سے دیکھی ہے، کبھی بھی کسی بچے کا ایسے حالات سے سامنا نہیں ہونا چاہیے۔"

انہوں نے جنگ بندی کا مطالبہ کیا تاکہ یونیسیف ایسے بچوں کا صحیح شمار کر سکے جو اپنے والدین سے جدا ہیں یا اکیلے حیات رہ گئے ہیں، ان کے رشتہ داروں کا پتہ لگا سکے اور انہیں نفسیاتی مدد فراہم کر سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں