ہم اپنے مقاصد حاصل کریں گے: اسرائیلی وزیر دفاع کا دوستوں اور دشمنوں کو پیغام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

رفح شہر میں آپریشن کو روکنے کے حوالے سے امریکی دباؤ کا واضح جواب دیتے ہوئے اسرائیلی وزیر دفاع یوو گیلنٹ نے دشمنوں اور دوستوں کے ساتھ بات چیت کے انداز میں کہا کہ ان کا ملک غزہ کی پٹی میں اپنے مقصد کے حصول کے لیے جو ضروری ہو گا وہ کرے گا۔

گیلنٹ نے اپنے دفتر سے شائع تقریر کے متن کے مطابق کہا کہ میں اسرائیل کے دشمنوں کے ساتھ ساتھ اپنے قریبی دوستوں سے بات کر رہا ہوں کہ اسرائیل کو زیر نہیں کیا جا سکتا، ہم اپنے موقف پر قائم رہیں گے۔ ہم اپنے مقاصد حاصل کریں گے۔ ہم حماس پر حملہ کریں گے، ہم حزب اللہ پر حملہ کریں گے، اور ہم سلامتی حاصل کریں گے۔

جو کچھ کرنا پڑا کریں گے

انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں جو کچھ بھی کرنا پڑے گا وہ کریں گے۔ میں دہراتا ہوں کہ اسرائیل کے شہریوں کا دفاع کرنے، اپنے خلاف خطرات کو ختم کرنے اور ان لوگوں جو ہمیں تباہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کیخلاف کھڑے ہونے کے لیے جو کچھ بھی کرنا پڑے ہم کریں گے۔

گیلنٹ کا یہ بیان امریکی صدر بائیڈن کی اس انتباہ کے تناظر میں سامنے آیا ہے جس میں بائیڈن نے کہا ہے کہ اگر اسرائیل نے جنوبی غزہ کے شہر رفح پر حملہ کیا تو امریکہ اسے اسلحے کی سپلائی روک دے گا۔ واضح رہے رفح میں دس لاکھ سے زیادہ فلسطینی مقیم ہیں۔

بائیڈن نے سی این این کے ساتھ ایک انٹرویو کے دوران کہا کہ اگر وہ (اسرائیلی) رفح میں داخل ہوتے ہیں تو میں انہیں وہ ہتھیار فراہم نہیں کروں گا جو پہلے شہروں کے خلاف استعمال کیے گئے تھے۔

قبل ازیں اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو نے بائیڈن کے جواب میں اپنے ’’ایکس‘‘ اکاؤنٹ پر ایک ویڈیو کلپ دوبارہ شائع کیا جس میں انہوں نے کہا کہ ان کا ملک غلبہ حاصل کرے گا چاہے وہ تنہا ہی کیوں نہ رہے۔ انہوں نے کہا کہا کہ کوئی ریاست اسرائیل کو اپنی حفاظت سے نہیں روک سکتی۔ اسرائیل تنہا بھی اپنے دفاع کے لیے کھڑا رہے گا۔

واضح رہے سینئر امریکی حکام نے اطلاع دی کہ امریکہ نے گزشتہ ہفتے اسرائیل کو 1,800 بموں کی فراہمی معطل کر دی تھی۔ ان بموں میں 2000 پاؤنڈ وزنی اور 500 پاؤنڈ وزنی بم شامل تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں