بچوں کے حقوق کی خلاف ورزیاں، اسرائیل اقوام متحدہ کی بلیک لسٹ میں شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ نے جمعے کو غزہ میں بچوں کے خلاف انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں پر اسرائیل کو اپنی بلیک لسٹ میں شامل کر لیا۔

یہ فہرست، جسے ’لسٹ آف شیم‘ بھی کہا جاتا ہے، اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتریس کے آفس کی طرف سے پیش کی گئی ایک سالانہ رپورٹ سے منسلک ہے جس میں مسلح تنازعات میں بچوں کے خلاف انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو درج کیا گیا ہے۔

ٹائمز آف اسرائیل کے مطابق اس بلیک لسٹ میں روس، افغانستان، صومالیہ، شام، یمن، داعش اور بوکو حرام بھی شامل ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق اقوام متحدہ کی یہ رپورٹ جون کے آخر تک شائع کر دی جائے گی۔

گذشتہ ہفتے عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کے مطابق غزہ میں کم از کم پانچ میں سے چار بچے 72 گھنٹوں میں سے پورا ایک دن خوارک کے بغیر رہے ہیں۔

فلسطینی حکومت کے مطابق، کم از کم 32 افراد، جن میں سے بیشتر تعداد بچوں کی ہے، غزہ میں جنگ کے آغاز سے اب تک خوراک کی قلت سے جان سے جا چکے ہیں۔

بچوں کے خلاف انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر انسانی حقوق کی تنظیموں نے بہت عرصے سے اقوام متحدہ پر زور دے رکھا تھا کہ وہ اسرائیل کو فہرست میں شامل کرے۔

2022 میں اقوام متحدہ نے تنبیہہ جاری کی تھی کہ اگر اسرائیل نے بچوں کے حقوق میں بہتری نہیں لائی تو وہ فہرست کا حصہ بن سکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں