مشرق وسطیٰ امن بات چیت، جان کیری مذاکراتی ٹیم کی تلاش میں!

اسرائیلی اور فلسطینی مذاکرات کاروں زیپی لیفینی اور صائب عریقات کی چند روز میں واشنگٹن آمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی وزیرخارجہ جان کیری مشرق وسطیٰ امن بات چیت کے لیے اپنی مذاکراتی ٹیم کو حتمی شکل دے رہے ہیں اور توقع ہے کہ اسرائیل میں سابق امریکی سفیر مارٹن انڈائیک اس ٹیم کی قیادت کریں گے۔

امریکی محکمہ خارجہ کی خاتون ترجمان جین ساکی نے سوموار کو اپنی معمول کی نیوز بریفنگ میں مارٹن انڈائیک کے انتخاب کی تصدیق یا تردید تو نہیں کی ہے لیکن امریکی میڈیا کے بہت سے اداروں کا کہنا ہے کہ وہ امریکی ٹیم کی سربراہی کے لیے جان کیری کا انتخاب ہوں گے۔

جان کیری نے اسرائیل اور فلسطینی اتھارٹی کے درمیان امن مذاکرات کی بحالی کے لیے گذشتہ ہفتے مشرق وسطیٰ کا دورہ کیا تھا اور اس کے اختتام پر اعلان کیا تھا کہ اسرائیلی اور فلسطینی مذاکرات کاروں نے براہ راست امن بات چیت کی بحالی کے لیے ملاقات سے اتفاق کیا ہے اور اس ضمن میں فریقین کے درمیان ایک سمجھوتا طے پا گیا ہے۔

اسرائیل کی اعلیٰ مذاکرات کار زیپی لیفینی اور ان کے فلسطینی ہم منصب صائب عریقات آیندہ چند روز میں واشنگٹن پہنچنے والے ہیں اور تین سال سے تعطل کا شکار امن مذاکرات کا ازسرنو آغاز کریں گے۔

امریکی محکمہ خارجہ کی ترجمان نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ گذشتہ برسوں میں یہ پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ طرفین کے سرکاری مذاکرات کاروں نے اس سطح پر ملاقات سے اتفاق کیا ہے۔ ترجمان نے مذاکرات کی بحالی کی متعین تاریخ نہیں بتائی اور صرف اتنا کہا ہے کہ امریکی عہدے دار دونوں فریقوں کے ساتھ رابطے میں ہیں۔

جین ساکی نے کہا کہ امن مذاکرات ایک چیلنج والا عمل ہیں اور جان کیری تمام بوجھ اپنے کندھوں پر نہیں اٹھا سکتے ہیں کیونکہ مذاکرات روزانہ کی بنیاد پر ہوں گے اس لیے وہ ایک سینیر ٹیم کا انتخاب کررہے ہیں۔

درایں اثناء وائٹ ہاؤس کے ترجمان جے کارنے نے کہا ہے کہ امریکی انتظامیہ آیندہ مذاکرات کے بارے میں بہت محتاط طور پر خوش گمان ہے۔ ترجمان کے بہ قول ''تنازعات کو طے کرنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ دونوں فریق آمنے سامنے مل بیٹھیں اور بات چیت کریں''۔

امریکا کی مذاکراتی ٹیم کے متوقع سربراہ مارٹن انڈائیک اس وقت بروکنگز انسٹی ٹیوشن میں خارجہ پالیسی کے سربراہ ہیں اور مشرق وسطیٰ میں سفارت کاری کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں۔

انڈائیک سابق امریکی صدر بل کلنٹن کے دورحکومت میں اسسٹنٹ سیکرٹری آف اسٹیٹ برائے مشرق قریب رہے تھے۔ وہ سنہ 1995ء سے 1997ء تک اسرائیل میں امریکا کے سفیر رہے تھے۔ اس کے بعد سنہ 2000 ء سے 2001ء تک انھوں نے دوبارہ اسرائیل میں بطور سفیر خدمات انجام دی تھیں۔ وہ برطانیہ میں پیدا ہوَئے تھے، بچپن میں وہ والدین کے ہمراہ آسٹریلیا چلے گئے اور سنہ 1993ء میں انھوں نے امریکی شہریت حاصل کر لی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں