اردن: ابوقتادہ عدالت سے بری، دہشت گردی کا الزام تھا

ابو قتادہ کو اسامہ بن لادن کا دست راست کہا جاتا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اردن کی سلامتی سے متعلق مقدمات کو دیکھنے والی ایک عدالت نے انتہا پسند عالم دین ابو قتادہ کو بری کر دیا ہے۔ ابو قتادہ پر دہشت گردی میں ملوث ہونے کا الزام تھا۔

سلفی نظریات کے حامل اس عالم دین پر 2000ء میں عمان کے ایک ہوٹل میں بم نصب کرنے کے الزام کے تحت مقدمہ چلایا جا رہا تھا۔ تاہم عدالت نے ابو قتادہ پر الزام ثابت نہ ہونے کی بنیاد پر انہیں رہا کر دیا ہے۔

عدالتی ذرائع کے مطابق ابو قتادہ کے خلاف شواہد موجود نہیں ہیں اس لیے بری کر دیا گیا ہے۔ واضح رہے ایک زمانے میں اسامہ بن لادن کا دست راست کہا جاتا تھا۔

انہیں 2013ء میں برطانیہ سے ڈی پورٹ کر دیا گیا تھا۔ انہوں نے برطانیہ میں دس سال تک قانونی جنگ لڑی۔ اس سے پہلے انہیں ان کی عدم موجودگی میں سزائے موت سنائی گئی تھی۔

ان پر 1999ء میں عمان کے امریکی سکول پر بم حملے کا بھی الزام تھا۔ تاہم عدالت نے بری قرار دے دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں