.

داعش نے نمرود کے بعد تاریخی شہر خضر بھی مسمار کردیا

یونیسکو کی جانب سے آثارقدیمہ کی تباہی کی شدید مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دہشت گرد تنظیم دولت اسلامیہ عراق و شام [داعش] کے جنگجوئوں نے شمالی عراق کے تاریخی شہر ’’نمرود‘‘ کا نام و نشان مٹانے کے بعد اس سے متصل ایک دوسرے تاریخی شہر الخضر میں بھی آثارقدیمہ کو تباہ و برباد کردیا ہے۔

کرد میڈیا اور خبر رساں اداروں کی رپورٹس کے مطابق داعشی جنگجوئوں نے ہفتے کے روز نینویٰ گورنری کے اہم شہر الخضر کو مسمار کرنا شروع کیا اور شام تک شہر کا بڑا حصہ مسمار کر دیا گیا تھا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق تاریخی اعتبار سے الخضر بھی نمرود شہر ہی کی طرح ایک قدیم اور تاریخی شہر سمجھا جاتا ہے جس میں بعض آثار قدیمہ دوسری صدی عیسوی کے دور کی بھی موجود ہیں۔

کردستان لیبر پارٹی کے ایک عہدیدار سعید مموزینی نے میڈیا کو بتایا کہ داعشی جنگجوئوں نے بلڈوزروں کی مدد سے الخضر قصبے کے آثار قدیمہ مسمار کرنا شروع کردیے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ الخضر شہر دو کلو میٹر کے علاقے پر پھیلا ہوا ہے۔ داعش نے شہر میں شب خون مارنے سے قبل وہاں پر موجود سونے اور چاندی کی نوادرات بھی چوری کرلی تھیں۔ سونے اور چاندی کے سکے اور برتن قدیم آشورین شنہشاہوں کے دور کے اس شہر میں موجود تھے۔

خیال رہے کہ الخضر موصل شہر سے جنوب میں 80 کلو میٹر کے فاصلے پرواقع ایک خوبصورت اور تاریخی شہر ہے۔ اس وقت یہ نینوٰی گورنری کا حصہ ہے۔ شہر کی تاریخی اہمیت کا انداز اس امر سے لگایا جاسکتا ہے کہ یہاں پر نہ صرف قدیم بادشاہوں کے مخطوطات کی بڑی تعداد موجود تھی بلکہ شہر کے پرانے درختوں اور پتھروں پر بھی تحریریں کنندہ کی گئی تھیں۔ سنہ 1951ء میں الخضر شہر کو عالمی ثقافتی ورثے کا حصہ قرار دیے ہوئے اس کی حفاظت یقینی بنانے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔

الخضر شہر کی قدیم باقیات میں دوسری اور تیسری صدی عیسوی کے آثارقدیمہ بھی شامل ہیں۔ تجارتی اعتبار سے بھی یہ شہر ماضی میں درجہ دجلہ اور فرات کی طرف سے گذرنے والوں کا اہم مرکز رہا۔ غیرملکی حملہ آور بھی اسی راستے سے عراق میں داخل ہوتے۔ اخمینیوں، سلوقیوں، اہل فارس، رومن اور ساسانیوں کے درمیان ہونے والی جنگجوں میں یہ شہر مرکزی اہمیت کا حامل رہا جہاں بڑے بڑے جنگی معرے لڑے جاتے رہے ہیں۔

یونیسکو کی جانب سے شہرکی تباہی کی مذمت

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے سائنس وثقافت کی جانب سے ہفتے کے روز جاری ایک بیان میں الخضر اور نمرود شہروں کی داعش کے ہاتھوں تباہی کی شدید مذمت کرتے ہوئے تاریخی مقامات کو نقصان پہنچانے کو جنگی جرم قرار دیا گیا ہے۔

یونیسکو کی خاتون ڈائریکٹر ایرینا بوکوفا نےاپنے ایک بیان میں کہا کہ الخضر میں آثار قدیمہ کی تباہی عراق میں ثقافتی بربادی کا ایک نیا سلسلہ ہے جس جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔ انہوں نے کہا کہ داعشی جنگجوئوں نے ہفتے کے روز بلڈوزوں کی مدد سے عالمی ثقافتی ورثے کا حصہ قرار دیے گئے شہر الخضر کو تاخت تاراج کردیا ہے۔

خیال رہے کہ عراق میں سرگرم دولت اسلامی اسے قبل شمالی شہرنمرود اور موصل میں بھی آثار قدیمہ کو تباہ کرچکی ہے۔ داعش کےہاتھوں تاریخی شہروں کی مسماری کا عمل ایک ایسے وقت میں جاری ہے جب عالمی اتحادی فوج اور عراق فورسز کا داعش کے خلاف ایک بڑا زمینی اور فضائی آپریشن جاری ہے۔ اس آپریشن میں داعش کو شمالی عراق میں مزید پسپائی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔