.

"مسجد اقصیٰ میں سیاستدانوں کے داخلے پر پابندی نامنظور"

نیتن یاہو نے اسرائیلی سیاست دانوں کے مسجد میں داخلے پر پابندی عاید کر رکھی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی پارلیمنٹ کے عرب ارکان نے وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کی جانب سے ارکان نیسٹ کے مقبوضہ بیت المقدس کے حساس مقام مسجد اقصی داخلے پر عاید پابندی توڑنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ نماز جمعہ مسلمانوں کے تیسرے مقدس حرم مسجد اقصیٰ میں ادا کریں گے۔

عرب رکن نیسٹ احمد تیبی نے جمعرات کے روز ایک بیان میں کہا کہ نہ تو نیتن یاہو اور نہ ہی دائیں بازو کے ان کے اسرائیلی حواری ہمیں مسجد اقصیٰ داخل ہونے سے روک سکتے ہیں۔ "پابندی حواس باختگی کا مظہر غیر قانونی اقدام ہے۔"

واضح رہے کہ اسرائیل کی ایک سو بیس رکنی پارلیمنٹ میں تیرہ عرب ہیں۔

یاد رہے کہ انتہا پسند اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نے پولیس کو حکم دیا ہے کہ وہ مقبوضہ بیت المقدس میں آنے والے وزراء اور ارکان پارلیمان کو مسجد الاقصیٰ میں داخل ہونے سے روک دے۔

اسرائیلی اخبار 'ہارٹز' نے اپنی بدھ کی اشاعت میں اسرائیلی وزراء اور ارکان پارلیمان کے مسجد الاقصیٰ میں داخلے کو روکنے کی اطلاع دی ہے۔ اس اقدام کا مقصد مقبوضہ بیت المقدس میں فلسطینیوں اور قابض فورسز کے درمیان پائی جانے والی کشیدگی کو کم کرنا ہے۔

مسجد الاقصیٰ میں حالیہ دنوں کے دوران قابض اسرائیلی فورسز اور یہود کی دراندازی کے خلاف فلسطینیوں نے احتجاج کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے اور غرب اردن کے مختلف شہروں اور قصبوں میں فلسطینی مظاہرین اور اسرائیلی فوجیوں کے درمیان جھڑپیں ہوئی ہیں۔

فلسطینی اس خدشے کا اظہار کر رہے ہیں کہ اسرائیل مسجد الاقصیٰ کی موجودہ حیثیت کو تبدیل کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ اس مقدس مقام کے موجودہ ''اسٹیٹس کو'' کے مطابق یہود کو وہاں زائر کی حیثیت سے داخل ہونے کی اجازت ہے مگر انھیں عبادت کرنے کا حق حاصل نہیں ہے۔

اسرائیل کا کہنا ہے کہ اس کا موجودہ انتظامات کو تبدیل کرنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے مگر یہودیوں کا ایک انتہا پسند گروپ اپنے ہم مذہبوں کو مسجد الاقصیٰ میں آنے پر اُکسا رہا ہے اور اس کی اس تحریک کے پیش نظر ہی اسرائیل مسلمانوں کی ان کے قبلہ اوّل میں داخلے پر آئے دن پابندیاں عاید کر دیتا ہے۔

واضح رہے کہ اردن مقبوضہ بیت المقدس میں مسلمانوں کے مقدس مقامات کی دیکھ بھال کا ذمے دار ہے اور وہ مسجد الاقصیٰ میں کوئی خلاف ورزی ہونے کی صورت میں اسرائیل سے شکایت کرتا ہے۔ انتہا پسند یہودیوں کی جانب سے حالیہ دنوں میں مسجد الاقصیٰ میں داخلے کی متعدد مرتبہ کوششیں کی گئی ہیں اور ان کی مزاحمت کرنے والے فلسطینی نوجوانوں کے ساتھ جھڑپیں بھی ہو چکی ہیں۔

یہودی مسجد الاقصیٰ کے لیے ٹیمپل ماؤنٹ کی اصطلاح استعمال کرتے ہیں۔ غیر مسلموں کو صرف اجازت ناموں کے ذریعے ہی الاقصیٰ کمپلیکس میں داخل ہونے کی اجازت ہے لیکن یہودیوں کو مسجد کے اندر عبادت کی اجازت نہیں ہے کیونکہ اس سے گڑ بڑ کا اندیشہ رہتا ہے۔ اس کے بجائے وہ مسجد الاقصیٰ کی دیوارغربی کے نیچے عبادت کر سکتے ہیں۔

فلسطینیوں کا کہنا ہے کہ یہودیوں کی جانب سے مسجد الاقصیٰ میں بار بار مداخلت کی کوشش سے اس کا تقدس مجروح ہوتا ہے۔ وہ جب ان انتہا پسند یہودیوں کو روکنے کی کوشش کرتے ہیں تو پولیس کشیدگی کے خاتمے اور امن وامان برقرار رکھنے کے نام پر ان کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر دیتی ہے۔