.

لبنان اپنی ''عروبہ'' برقرار رکھے: سعودی سفیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بیروت میں متعیّن سعودی سفیر علی عواض العسیری نے لبنان پر زوردیا ہے کہ وہ اپنی ''عروبہ'' برقرار رکھے۔

لبنانی روزنامے ڈیلی اسٹار کی رپورٹ کے مطابق انھوں نے منگل کے روز دارالحکومت میں ایک نیوز کانفرنس میں لبنان سے کہا ہے کہ وہ اپنی ''عرب شناخت'' کی جانب لوٹ آئے۔انھوں نے یہ بات سعودی عرب کی جانب سے لبنان کی قریباً چار ارب ڈالرز کی فوجی امداد منقطع کیےجانے کے ایک روز بعد کہی ہے۔ سعودی عرب کے اس فیصلے کے بعد لبنانی وفود کی بیروت میں سعودی سفارت خانے میں آمد کا سلسلہ جاری ہے۔

عواض العسیری نے کہا کہ ''سعودی عرب لبنان کی سلامتی اور خود مختاری کو برقرار رکھنے کے لیے چوکس ہے''۔ان کا کہنا تھا کہ وفود کی اچانک سفارت خانے میں آمد سے لبنانی عوام کی ہمارے لیے محبت اور ان کی سعودی، لبنانی تعلقات برقرار رکھنے کی خواہش کا بھی اظہار ہوتا ہے۔

درایں اثناء لبنانی وزیر اعظم تمام سلام نے کہا ہے کہ وہ ایک وزارتی وفد کے ہمراہ مستقبل قریب میں خلیجی ریاستوں کے دورے پر روانہ ہوں گے۔انھوں نے سوموار کو ایک بیان میں کہا تھا کہ لبنان عرب ممالک کے ساتھ کھڑا ہے۔

سعودی عرب کے رویے میں لبنان کے بارے میں یہ سرد مہری اس کے ایران کی جانب حد سے زیادہ جھکاؤ کی وجہ سے آئی ہے۔لبنان نے تہران میں سعودی سفارت خانے اور مشہد میں قونصل خانے پر مشتعل ایرانی مظاہرین کے حملے کی مذمت نہیں کی تھی جبکہ لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ خطے میں جاری علاقائی جنگوں میں ایران کے گماشتہ گروپ کا کردار ادا کررہی ہے جس سے سعودی عرب نالاں ہے۔