یمن : صعدہ میں اتحادی بم باری ، حوثی کمانڈر سمیت 11 ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن میں عرب اتحادی طیاروں کے حملے میں صعدہ میں ایک حوثی کمانڈر اپنے 10 ساتھیوں سمیت مارا گیا۔

ادھر تعز صوبے میں یمن کی سرکاری فوج کی نئی پیش قدمی سامنے آئی ہے۔ فوجی کونسل کے سرکاری ترجمان کرنل منصور الحسانی کے مطابق سرکاری فوج نے تعز میں التبہ السوداء ، تبہ الخلوہ اور جبل المنعم کو مکمل طور اپنے کنٹرول میں لے لیا ہے جب کہ تعز شہر کے شمال میں جبل الوعش کی سمت پیش قدمی جاری ہے۔

عرب اتحادی طیاروں نے اپنے طور تبہ الضنین کے ٹھکانے پر تین حملے کیے جن کے نتیجے میں ہتھیاروں کے ایک ڈپو میں آگ لگ گئی اور ملیشیاؤں کے متعدد ارکان مارے گئے۔

"الحدث" نیوز چینل کے ذرائع نے بتایا ہے کہ تعز میں ملیشیاؤں کے ٹھکانوں پر اتحادی طیاروں کی بم باری سے حوثی اور صالح ملیشیاؤں کے تقریبا 20 ارکان ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے۔ اس کے علاوہ تعز شہر کے اکثر محاذوں پر ملیشیاؤں کے ارکان کی سرکاری فوج اور عوامی مزاحمت کاروں کے ساتھ جھڑپیں ہوئیں۔

الجوف صوبے میں میدانی ذرائع نے بتایا ہے کہ سرکاری فوج اور عوامی مزاحمت کاروں کی توپوں نے حوثیوں کے ٹھکانوں پر گولہ باری کی جس کے نتیجے میں دو افراد ہلاک اور کئی زخمی ہوگئے۔

صعدہ میں عرب اتحادی لڑاکا طیاروں نے متعدد فضائی حملے کیے جن کے دوران رازح ضلع کے علاقے برکان میں حوثی کمانڈر اپنے 10 ساتھیوں سمیت جان سے ہاتھ دھو بیٹھا۔ یہ تمام افراد ایک گاڑی میں سوار تھے۔

عرب اتحادی طیاروں نے الشریجہ کے علاقے میں بھی حوثی اور معزول صالح کی ملیشیاؤں کے ٹھکانے پر دو حملے کیے۔ ذرائع کے مطابق یہ ٹھکانہ تزویراتی اہمیت کا حامل ہے اور ملیشیائیں اس کا دفاع کرنے کی سر توڑ کوششیں کر رہی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں