.

پیرس : موصل کے مستقبل سے متعلق اجلاس.. بنا ایران کے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانسیسی وزیر خارجہ نے منگل کے روز اعلان کیا ہے کہ فرانس اور عراق جمعرات کے روز پیرس میں ایک اجلاس کا انتظام کر رہے ہیں جس میں 20 ملکوں کے وزراء شرکت کریں گے۔ اجلاس کا مقصد داعش سے موصل کو واپس لیے جانے کے لیے عراقی فوج اور بین الاقوامی اتحاد کے حملے کے آغاز کے بعد موصل کے "سیاسی مستقبل کی تیاری" کرنا ہے۔

جون مارک ایرولٹ کا کہنا تھا کہ "عسکری معرکے کے بعد موصل کے سیاسی مستقبل اور استحکام کی تیاری کی جانی چاہیے"۔ انہوں نے واضح کیا کہ اجلاس میں ایران کو دعوت نہیں دی گئی ہے۔

جون ماک کے مطابق دہشت گردوں کے شام کے شہر الرقہ میں پناہ لینے کے بعد ضروری ہو گیا ہے کہ اس شہر کو بھی واپس لیے جانے کے طریقہ کار پر سنجیدگی سے غور کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ "الرقہ کے حوالے سے.. اسی انداز کو اپنانے کی ضرورت ہے جو موصل میں اپنایا گیا۔ اس میں وقت درکار ہوگا اور یہ معاملہ سیاسی عزم کا مطالبہ کرتا ہے۔ تاہم ہمیں خود کو منظم کرنا ہوگا "۔

فرانسیسی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ "ہمارے لیے ممکن نہیں کہ ہم داعش تنظیم کو اس واسطے چھوڑ دیں کہ وہ پھر سے اپنی صفوں کو منظم کرے۔ ہم پر لازم ہے کہ خود کو تیار کریں"۔