.

حزب اللہ اور اس کا ساتھ دینے والوں کے خلاف عالمی اتحاد بنایا جائے : السبہان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے وزیر ممکت برائے خلیجِ عربی ثامر السبہان نے امریکا کی جانب سے لبنانی ملیشیا حزب اللہ پر پابندیوں کا خیر مقدم کیا ہے۔ تاہم ان کا کہنا ہے کہ اس تنظیم کا راستہ روکنے کے لیے مثالی حل یہ ہے کہ حزب االلہ اور اس کے حلیفوں کے خلاف ایک بین الاقوامی اتحاد قائم کیا جائے۔

اتوار کے روز اپنی ٹوئیٹ میں السبہان نے لکھا کہ "لبنان میں دہشت گرد ملیشیائی تنظیم (حزب اللہ)کے خلاف امریکی پابندیاں خوش آئند ہیں مگر علاقائی امن و سلامتی کو یقینی بنانے کے لیے اس ملیشیا اور اس کے ساتھ کام کرنے والوں کا مقابلہ کرنے کے واسطے ایک بین الاقوامی اتحاد کی ضرورت ہے"۔

اس سے قبل 8 ستمبر کو اپنی ایک ٹوئیٹ میں ثامر السبہان یہ باور کرا چکے ہیں کہ "دنیا بھر میں دہشت گردی اور شدت پسندی کا منبع ایران اور اس کی سب سے بڑی اولاد حزب الشیطان ہے۔ جس طرح دنیا داعش کے ساتھ نمٹ رہی ہے اسی طرح اس کے منبع کے ساتھ مقابلہ کرنا بھی ناگزیر ہے۔ ہمارے عوام کو امن و سلامتی کی ضرورت ہے"۔

السبہان نے حزب اللہ تنظیم کے جرائم کے حوالے سے اپنی 4 ستمبر کی ٹوئیٹ میں لکھا تھا کہ "حزب الشیطان ہمارے عوام کے خلاف جن غیر انسانی جرائم کا ارتکاب کر رہی ہے اس کا اثر حتمی طور پر لبنان میں نظر آئے گا۔ لبنانیوں کو چاہیے کہ وہ اس تنظیم کے ساتھ یا مخالف ہونے میں سے کسی ایک راستے کو چُن لیں۔ عربوں کا خون قیمتی ہے"۔