.

فضائی راستے کھلنے کے بعد عدن کے ہوائی اڈے فلائیٹ آپریشن بحال

فوری حرکت میں نہ آتے تو یمنی عوام بھوک سے مرجاتے: گورنر حجۃ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے فضائی راستے کھولے جانے کے بعد ملک کے عبوری دارالحکومت عدن میں فلائیٹ آپریشن بحال ہوگیا ہے۔ مسافر بردار عالمی کمپنیوں کے طیاروں کی آمد ورفت کے ساتھ مال بردار ہوائی جہاز بھی عدن کے ہوائی اڈے پر اترنا شروع ہو گئے ہیں۔

یمن کی سرکاری ایئرلائن کی رپورٹ کے مطابق عدن اور سیئون کے بین الاقوامی ہوائی اڈوں سے سابقہ شیڈول کے تمام پروازیں مرحلہ وار بحال کی جا رہی ہیں۔

خیال رہے کہ دو روز قبل عرب اتحاد نے یمن کے فضائی ، بحری اور بری راستے کھولنے کا اعلان کیا تھا۔ چند روز قبل حوثیوں کی طرف سے سعودی عرب پر میزائل حملوں کے بعد سرحد پار سے دہشت گردی کی روک تھام کے لیے عارضی طور پر یمن کی سرحدوں کی ناکہ بندی کی گئی تھی۔

عرب اتحاد نے اقوام متحدہ سے ایک بار پھر اپنا مطالبہ دہرایا ہے کہ وہ الحدیدہ بندرگاہ کا کنٹرول اپنے ہاتھ میں لینے کے لیے اقدامات کرے تاکہ یمن کے حوثی باغیوں کو بیرون ملک بالخصوص ایران کی طرف سے اسلحہ کی سپلائی روکی جا سکے۔

ادھر یمن کی حجۃ گورنری کے گورنرعبدالکریم السنینی نے یمن کے جاری انسانی بحران کو جلد ختم کرنے ضرورت پر زور دیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگر ہم بروقت حرکت میں نہ آتے تویمنی عوام بھوک سے مرجاتے۔