ایرانی اپوزیشن رہ نما کا نوجوانوں سے مظاہروں میں شامل ہونے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایرانی اپوزیشن کی معروف رہ نما مریم رجوی نے ٹوئیٹر پر اپنے ایک پیغام میں تہران کے نوجوانوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ایرانی دارالحکومت میں اُن مظاہرین کے ساتھ شامل ہو جائیں جو ایرانی کرنسی کے مقابل امریکی ڈالر کی قدر میں ہوش رُبا اضافے کے خلاف سراپا احتجاج بنے ہوئے ہیں۔

رجوی نے اپنی ٹوئیٹ باور کرایا کہ مہنگائی، ڈالر کی قیمت میں اضافہ اور ایرانی عوام کی ابتر حالت یہ سب ایرانی نظام اور اس کے سرکردہ افراد کی پالیسی کا نتیجہ ہے جنہوں اربوں کی رقوم لوُٹ کر ان کو یا تو عوام کے خلاف کریک ڈاؤن میں اور یا پھر شام اور دیگر ممالک میں لڑائی میں ملوث ہونے کے واسطے لُٹا دیا۔

رجوی نے لکھا کہ "میں تہران میں تمام نوجوانوں اور بازار سے تعلق رکھنے والوں پر زور دیتی ہوں کہ وہ احتجاج کرنے والوں کے ساتھ شریک ہو جائیں"۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہمارا دستور اور آئین آزادی، جمہوریت اور مساوات ہے۔ ہمارا آئین وہ نہیں جو مجلس خبرگان جرائم نے اپنا رکھا ہے"۔

سوشل میڈیا پر سرگرم کارکنان نے ایران میں اقتصادی صورت حال بہتر بنانے کے مطالبے کے واسطے وسیع پیمانے پر ایک عوامی احتجاجی مہم شروع کی۔

ادھر پیر کے روز ایرانی دارالحکومت تہران میں کئی اہم مقامات اور سڑکیں احتجاج کرنے والے تاجروں اور کاروباری شخصیات سے بھر گئیں۔ ڈالر کی قدر میں ہوش رُبا اضافے کے خلاف بہت سے مالکان نے اپنی دکانیں بند کر دیں۔

ایران میں گزشتہ 40 برس کے دوران پہلی مرتبہ امریکی ڈالر کا نرخ تہران کی اوپن مارکیٹ میں غیر مسبوق سطح پر پہنچ گیا۔ اس موقع پر ایک ڈالر کی قیمت نے 87 ہزار ایرانی ریال کی سطح کو چُھو لیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں