.

سعودی سپریم علماء کونسل کا 'مکہ دستاویز' کے اجراء کا خیر مقدم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی سپریم علماء کونسل نے رابطہ عالم اسلامی کے اجلاس کے میں 'مکہ دستاویز' کی منظوری کا خیر مقدم کیا ہے۔

مملکت کی سرکاری نیوز ایجنسی'ایس پی اے' کے مطابق علماء کونسل کے جنرل سیکرٹریٹ سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ 'مکہ دستاویز' کا اجراء اسلام کی اعتدال پسندانہ تعلیمات اور کتاب وسنت کی تعلیمات کی عکاس ہے۔ یہ اس بات کا اظہار ہے کہ خادم الحرمین الشریفین کی قیادت میں سعودی عرب اسلام کی اعتدال پسندانہ تعلیمات کے فروغ میں سرگرم ہے۔

خیال رہے کہ گذشتہ روز مکہ معظمہ میں ہونے والے رابطہ عالم اسلامی کے اجلاس کے اختتام پر ’’مکہ دستاویز‘‘ جاری کی ہے جس میں مسلم معاشروں کے مختلف طبقات کے درمیان رواداری اور پُر امن بقائے باہمی کے فروغ کی ضرورت پر زور دیا گیا۔

یہ دستاویز اسلامی تعاون تنظیم کے سربراہ اجلاس سے دو روز قبل جاری کی گئی ہے۔ سات صفحات پر محیط ہے دستاویز میں مختلف اسلامی اصول بیان کیے گئے ہیں۔ ان کے ساتھ رواداری اور مساوات کے فروغ اور منافرت پھیلانے والے مبلغین کی حوصلہ شکنی کے لیے رہ نما ہدایات دی گئی ہیں۔ نیز کسی فرقے کے پیروکاروں کو کم تر خیال کرنے کی حوصلہ شکنی کی گئی ہے۔

پہلئ صفحہ پر ’مکہ دستاویز‘ کو مقدس شہر سے جاری کرنے کی اہمیت اجاگر کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ یہی بات سب سے مقدم ہے جس سے دستاویز کی اہمیت دوچند ہو جاتی ہے کہ اسے دنیا بھر میں بسنے والے ایک ارب ساٹھ کروڑ مسلمانوں کے مقام قبلہ سے جاری کیا جا رہا ہے۔

سعودی سپریم علماء کونسل کا کہنا ہے کہ ’’مکہ دستاویز‘‘ عالم اسلام کی حقیقی ترجمانی کرتی ہے۔ اس دستاویز کو پوری مسلم امہ کے جید علماء کی حمایت حاصل ہے۔