.

یمن سے متعلق الریاض معاہدے پرعمل درآمد کے خواہاں ہیں: سعودی عرب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ مملکت برادر پڑوسی ملک یمن کی خوش حالی، استحکام اور امن کا خواہاں ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی عرب کی وزارت خارجہ کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ مملکت الریاض میں یمن کی عبوری انقلابی کونسل اور آئینی حکومت کے درمیان طے پائے سمجھوتے پرعمل درآمد کی کوشش کررہی ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ سعودی عرب نے یمن کے عوام کی فلاح وبہبود کو ہمیشہ اولیت دی ہے۔ ہم یمن کی سلامتی، امن اور استحکام کے خواہاں ہیں۔ سعودی عرب نے یمن میں جاری دہشت گردی کی تمام اشکال کے خلاف آئینی حکومت کے ساتھ مل کر جنگ لڑی ہے اور آج بھی سعودی عرب یمن کی بقاء کی جنگ لڑ رہا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہےکہ یمن میں جاری دہشت گردی کے خلاف جنگ کو منطقی انجام تک پہنچانے کی کوششوں کے ساتھ جنگ سے متاثرہ عوام کی بہبود، ان کی بحالی اور ترقی کے لیے ملک میں کئی ترقیاتی منصوبوں پرکام شروع کیا ہے۔ سعودی عرب یمن کے عوام کی بہبود اور خوش حالی کے لیے مزید امداد بھی جاری رکھے گا۔

سعودی عرب کی وزارت خارجہ کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ الریاض کی میزبانی میں یمن کے دو متحارب فریقوں آئینی حکومت اور عدن کی عبوری کونسل کے درمیان سمجھوتہ کرایا تھا۔ سعودی عرب اس معاہدے پر اس کی روح کے مطابق دونوں فریقوں سے عمل درآمد کا خواہاں ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ یمنی عوام کو درپیش چیلنجز سے نبرد آزما ہونے کے لیےالریاض امن سمجھوتے پرعمل درآمد ناگزیر ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ یمن میں ایرانی حمایت یافتہ حوثی ملیشیا موجودہ تباہی کی ذمہ دار ہے۔