.

سعودی خاتون نے مطالعے کے متوالوں کو ایک جگہ جمع کرنے کا بیڑا کیوں اٹھایا ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسے بچپن سے ہی مطالعے سے عشق تھا۔ کتاب اس کی دوست بن گئی۔ پانچ برس قبل اس نے جدہ کے بین الاقوامی کتاب میلے کا دورہ کیا تو یہ اس کی زندگی کا ٹرننگ پوائنٹ بن گیا۔ اس نے اپنے نئے منصوبے کے آغاز کا فیصلہ کر لیا جس نے مطالعے کے شوقین افراد کو مکہ مکرمہ میں ایک مقام پر اکٹھا کر دیا۔

سعودی خاتون عفت علی نے اپنے پلیٹ فارم کو "عالم القراء" (قارئین کی دنیا) کا نام دیا ہے۔ یہ 3000 سے زیادہ کتابوں پر مشتمل ہے۔ ان میں سرفہرست شخصیت بہتر بنانے سے متعلق کتب اور عالمی ناول ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے عفت کا کہنا تھا کہ "مجھے کتابیں پڑھنے سے شغف رہا اور میں مختلف شعبوں سے متعلق کتابیں تلاش کرتی رہی .. یہاں تک کہ اس نے ایک جنون کی صورت اختیار کر لی کہ میں نے مکہ مکرمہ میں قارئین کو اکٹھا کرنے کے منصوبے پر عمل درامد یقینی بنا لیا .. وہ بھی ایک پر کشش اور کارگر انداز سے .. ایک ایسے ماحول میں جس کا مقصد قاری اور دانش ور کو ایک جگہ جمع کرنا ہے"۔

عفت نے واضح کیا کہ "معلومات کے خزانے اور متعدد سوشل میڈیا پلیٹ فارمز کے ساتھ اب بھی کاغذی کتاب اپنی طاقت برقرار رکھتی ہے ، اس کا ثبوت یہ ہے کہ بہت سے لوگ برقی مطالعے کے علاوہ کتاب کا ورق چُھونے کے خواہش مند ہوتے ہیں"۔

عفت علی اس بات کی منصوبہ بندی کر رہی ہیں کہ ان کا چھوٹا سا منصوبہ ایسے پر کشش پلیٹ فارم کی صورت اختیار کر لے جہاں لکھاری اور مطالعے کے شوقین افراد جمع ہو جائیں اور قاری اور مصنف کے درمیان مباحثے اور مکالمے کے پروگرام ترتیب دیے جا سکیں۔