.

'الحشد' ملیشیا میں شامل بعض گروپ عراق کو کمزور کر رہے ہیں: الصدر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے سرکردہ شیعہ مذہبی سیاسی رہ نما مقتدیٰ الصدر نے کہا ہے کہ الحشد الشعبی ملیشیا میں شامل بعض گروپ ملک کو کمزور کرنےکے لیے کام کر رہے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ‌ نیٹ کے مطابق اپنی متعدد ٹویٹس میں الصدر نے کہا کہ الحشد ملیشیا کو ٹارگٹ کلنگ اور گولہ باری کا سلسلہ بند کرنا ہو گا۔ الحشد کی طرف سے اپنے بعض حامیوں‌ کی طرف سے گولہ باری اور ٹارگٹ کلنگ کا اعتراف کرنا کافی نہیں اور نہ ہی بعض عناصر کی کارروائیوں سے لا تعلقی کے اظہار سے کام ہوگا۔ الحشد ملیشیا کو اپنی صفوں سے ایسے عناصر کو نکال باہر کرنا ہو گا جو ملک کو کمزور کر رہے ہیں۔

انہوں‌ نے الحشد ملیشیا پر زور دیا کہ وہ عراق کو دوسرے ملکوں کے لیے جنگ کا اکھاڑا نہ بنائے۔

الصدر نے کہا کہ عراق کی آزادی ، اس کی خود مختاری اور سلامتی کے لیے ہم سب نے کوششیں کی ہیں۔ ہم اپنے ہاتھوں اسے برباد نہیں کر سکتے۔

مقتدیٰ الصدر نے عراق کے اندرونی معاملات میں مداخلت کرنے والوں کو خبردار کیا کہ بغداد کے معاملات میں دخل اندازی کے خطرناک نتائج برآمد ہوں گے۔ خیال رہے کہ گذشتہ کچھ عرصے سے عراق میں نامعلوم مسلح افراد کی جانب سے ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت سماجی کارکنوں، سول سوسائٹی کے افراد عراق کی خود مختاری کے لیے آواز بلند کرنے والوں کو موت کے گھاٹ اتارا جا رہا ہے۔