.

سعودی عرب اور عمان کی کوششوں سے حوثیوں نے دو امریکی رہا کر دیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب اور سلطنت عمان کی مشترکہ کوششوں سے یمن کے ایرانی حمایت یافتہ حوثیوں نے دو امریکی شہریوں‌ کو رہا کر دیا۔
العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق حوثی باغیوں نے امریکی شہریت رکھنے والی خاتون مائیکل گیڈاڈ اور سانڈرا لولی کو کئی سال تک غیرقانونی طور پر حراست میں رکھنے کے بعد رہا کیا۔

اخبار وال اسٹریٹ جرنل کی رپورٹ کی رپورٹ میں‌ بتایا گیا ہے کہ سانڈرا لولی یمن میں‌ انسانی امداد کے میدان میں‌ کام کر رہی تھیں۔ انہیں تین سال قبل حوثیوں نے اغوا کر لیا تھا۔ گیڈاڈ ایک کاروباری شخص ہے جو ایک سال سے یمن میں حوثیوں‌ کی قید میں تھا۔ دونوں کو جلد ہی امریکا روانہ کردیا جائے گا۔ بلال فطین نامی ایک مقتول کی لاش بھی امریکا کے حوالے کی جائے گی جب کہ ایک اور شخص کی رہائی کا بھی امکان ہے تاہم اس کے زندہ یا مردہ ہونے کی تصدیق نہیں ہو سکی۔

صنعا سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق دونوں امریکیوں کو رہائی کے بعد بدھ کی شام ایک طیارے کے ذریعے عمان کے دارالحکومت مسقط منتقل کر دیا گیا ہے۔

یمن میں یرغمال شہریوں کی رہائی پر وائٹ ہاوس نے خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور عمان کے سلطان ھیثم بن طارق کی کوششوں کو سراہا گیا ہے۔ وائٹ ہاوس کا کہنا ہے کہ وہ یمن میں موجود بلال فطین کی میت بھی واپس لانے کی کوششیں‌ کر رہا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ یمن اور دوسرے ملکوں میں قید بنائے گئے امریکیوں کی بہ حفاظت واپسی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی اولین ترجیح ہے۔ ٹرمپ کے عہد صدارت میں 22 ملکوں میں یرغمال بنائے گئے 50امریکیوں کو واپس لایا گیا ہے۔