.

مصر: محلے داروں کا گھر پر دھاوا بولنے پر خاتون ڈاکٹر کی خود کشی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر میں پراسیکیوٹر جنرل نے ایک خاتون ڈاکٹر کی خود کشی کا سبب بننے والے تین افراد کو حراست میں رکھنے کا حکم دیا ہے۔ اس کیس میں گرفتار خاتون کو رہا کر دیا گیا ہے جبکہ ایک ملزم کو طبی معائنے کے لیے اسپتال منتقل کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق یہ واقعہ مشرقی قاہرہ میں دارالسلام کے مقام پر پیش آیا جہاں ایک 34 سالہ خاتون ڈاکٹر کے گھر میں اس کا ایک دوست اس سے ملنے آیا تو محلے داروں کو خاتون اس گھر پر آنے والے شخص کے بارے میں ان کے ناجائز تعلق کا شبہ ہوا۔ اس پر کچھ لوگوں‌ نے اس کے گھر پر چڑھائی کر دی اور دروازہ توڑ کر اندر داخل ہو گئے۔

لوگوں نے اندر گھس کر ڈاکٹر کو تشدد کا نشانہ بنایا اور اس نے بھاگ کر اپنی جان بچانے کی کوشش کی مگر لوگوں نے اس کا تعاقب کیا جس پر اس نے فلیٹ کی بالکونی سے چھلانگ لگا دی جس کے نتیجے میں اس کی موت واقع ہوگئی۔

تفتیش سے پتا چلا ہے کہ پراپرٹی کے مالک اور اس کی بیوی نے کچھ دوسرے افراد کے ہمراہ خاتون ڈاکٹر کے فلیٹ پر دھاوا بولا۔

تفتیش سے پتا چلا کہ خاتون ڈاکٹر کا ایک دوست اس کی عیادت کے لیے اس کے پاس آیا تھا۔ لوگوں کو شبہ ہوا کہ خاتون چونکہ غیر شادی شدہ ہے۔ اس لیے اس کے اس جنبی شخص کے ساتھ 'ناجائز' تعلقات ہوسکتے ہیں۔ تاہم لوگوں کے اس دعوے کا کوئی ثبوت نہیں ملا ہے۔ پراسیکیوٹر نے خاتون ڈاکٹر کی موت کا باعث بننے والے افراد کے خلاف سخت کارروائی کا فیصلہ کیا ہے۔