.

سعودی عرب: 'آمالا' کو 5 ارب ریال مالیت کے 100 میگا تعمیراتی ٹھیکے دینے کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی ریڈ سی ڈویلپمنٹ کمپنی کے سی ای او اور امالا کمپنی کے سربراہ جان پگانو نے انکشاف کیا کہ آنے والے دنوں میں آمالہ کو مملکت میں 100 تعمیراتی منصوبوں کے لیے 5 ارب ریال مالیت کے ٹھیکے دیے جائیں گے۔ ایک سو میگا منصوبوں کے لیے تعمیراتی کام کی منظوری سے ظاہر ہوتا ہے کہ بحر احمر ڈویلپمنٹ کمپنی تیزی کےساتھ اپنے ترقیاتی اور تعمیراتی منصوبوں کو آگے بڑھا رہی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مقامی کمپنیوں کے لیے سرمایہ کاری کے مواقع پیدا کرنا اور انہیں سعودی شہریوں کو فراہم کرنا اولین ترجیح ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ مقامی منصوبوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ بحیرہ احمر کی کمپنی کے 50 فی صد سے زاید ملازمین سعودی شہری ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ بحیرہ احمر ڈویلپمنٹ کمپنی کی طرف سے اب تک 70 فی صد منصوبے مقامی کمپنیوں‌کو دیے گئے ہیں۔

سیاحت اور اس کے مستقبل کے حوالے سےانہوں نے کہا کہ سعودی شہری بالخصوص نوجوان اپنے مستقبل کو خود تخلیق کرنے اور مملکت کی ترقی میں حصہ لینے کی شدید خواہش ظاہر کررہے ہیں۔ انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ گذشتہ سال کے شروع میں کمپنی کے ذریعہ کئے گئے ایک مقامی سروے کے نتائج سے ظاہر ہوا ہے کہ 10 میں سے 9 نوجوانملکی معیشت میں تنوع کے ساتھ سیاحت اور ہوٹلنگ کے شعبے میں ملازمت اور کاروبار کی تلاش میں ہیں۔ ان میں سے دو تہائی سعودی نوجوانوں کا خیال ہے کہ یہ شعبہ روزگار کے لیے ایک بہت بڑا وسیلہ ثابت ہوگا سعودی شہریوں کے لئے روزگار کی۔

پگانو نے زور دے کر کہا کہ بحیرہ احمر کے منصوبے میں ڈیجیٹل جدت اولین ترجیح ہے اور یہ کہ مجموعی طور پر منزل مقصود میں فراہم کردہ علاقوں اور خدمات میں موجود خزانوں کو تلاش کرنے کے لئے زائرین کے لیے پہلا تجربہ پیدا کرنے میں اہم کردار ادا کرے گا۔

انہوں نے اشارہ کیا کہ سمارٹ ٹرانسپورٹ ، سمارٹ سیکیورٹی ، سمارٹ عمارات اور بہت سے دوسرے شعبوں کو خود مختار بنانے کے لیے اسمارٹ حکمت عملی وضع کی گئی ہے۔ یہ پالیسی بحر احمر کمپنی کو انٹرنیٹ کے ذرئعے ماحولیات اور سیاحوں کے تجربات سے مربوط کرنے کی حکمت عملی وضع کرے گی۔