.
جوہری ایران

امریکا ایران کے ساتھ معاہدے پرواپس آتا ہے تب بھی اسرائیل اس کا پابند نہیں ہوگا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی وزیر اعظم نفتالی بینیٹ نے منگل کو زور دے کر کہا ہے کہ اسرائیل ایران کے خلاف کارروائی کرنے کی اپنی آزادی کو برقرار رکھے گا چاہے امریکہ 2015 کے ایران معاہدے پر واپس آجائے۔

ریخ مین یونیورسٹی کے انسٹی ٹیوٹ فار پالیسی اینڈ سٹریٹیجی میں ایک تقریب سے خطاب میں بینیٹ نے کہا کہ ایران کے ساتھ اسرائیل کا تصادم واقعی پوری دنیا کی ایک انتہا پسند حکومت کے خلاف جنگ ہے جو ایک جوہری چھتری کے نیچے شیعہ تسلط کی تلاش میں ہے۔ ہمیں امید ہے کہ دنیا اسے نظر انداز نہیں کرے گی لیکن اگر انہوں نےایسا کیا تو ہم ایسا نہیں کریں گے۔

نفتالی بینیٹ
نفتالی بینیٹ

بینیٹ نے وضاحت کی کہ موجودہ دور "پیچیدہ" ہے کیونکہ اسرائیل اپنے سب سے بڑے اتحادی [امریکا] کے ساتھ بعض معاملات پر اختلاف رکھتا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ امریکا اور ایران 2015 کے مشترکہ جامع پلان آف ایکشن میں واپسی کے حوالے سے اگلے ہفتے ویانا میں بالواسطہ مذاکرات کرنے والے ہیں۔ اس کے نتیجے میں واشنگٹن پابندیاں اٹھائے گا جبکہ تہران کی یورینیم افزودہ کرنے کی صلاحیت پر پابندیاں عائد کرے گا۔

بینیٹ نے اعلان کیا کہ "یہاں تک کہ اگر 'ایران کے ساتھ' معاہدے کی واپسی ہوتی ہے تو اسرائیل اس کا فریق نہیں ہے۔ وہ اس کا پابند نہیں ہے۔"

بینیٹ نے کہا کہ مشترکہ جامع پلان آف ایکشن نے 2015 کے بعد اسرائیلی دفاعی اسٹیبلشمنٹ کے لیے "نیند کی گولی" کے طور پر کام کیا کیونکہ اس نے اقدامات کرنے کے لیے اسرائیل کی رضامندی کو کم کر دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہم پچھلی بار کی غلطیوں کو نہیں دہرائیں گے جب ہم نے معاہدے کو ہائبرنیشن میں ڈال دیا۔ ہم آزادی سے کام کرنے کی اپنی صلاحیت کو برقرار رکھیں گے۔

بینیٹ نے اپنی تقریر میں اسرائیل کے گرد گھیرا ڈالنے والے ایران کے پراکسیوں، شام میں شیعہ ملیشیا، لبنان میں حزب اللہ اور غزہ میں حماس اور اسلامی جہاد کا حوالہ دیا۔

انہوں نے کہا کہ اپنے جوہری پروگرام میں پیش رفت کے علاوہ ایران نے مسلسل اسرائیل کو گھیرے میں لے رکھا ہے۔ ایران نے اپنی وفادار ملیشیاؤں کو مسلح کر کے اور ہر طرف میزائل نصب کر کے اسرائیل کی ہر کھڑکی سے ایران کو دیکھنا ممکن ہو گیا ہے۔