سعودی عرب: دورِ حاضر میں ’بلیّوں کے محبتی‘ سے ملیے

اب کوئی دن بلیوں کے بغیر نہیں گذرتا: محمد فرج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب سے تعلق رکھنے والے ایک نوجوان نے صحابی رسول حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کے طرزعمل کو اپناتے ہوئے بلیوں کی دیکھ بھال کو اپنا معمول بنا رکھا ہے۔

محمد فرج کو بلیوں سے محبت بچپن سے ہے اور اب وہ بلیوں کا مدد گار بن چکا ہے۔ سعودی عرب کے مشرقی علاقوں میں وہ مشکل سے دوچار بلیوں کو بچانے کے لیے سرگرم عمل رہتا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے محمد فرج نے انکشاف کیا کہ ان کے رضاکارانہ کام، جس کے ذریعے وہ بلیوں کی دیکھ بھال کرنے کی کوشش کرتے ہیں،میں کئی چیزیں شامل ہیں، ان میں بلیوں کو کھانا کھلانا سب سے نمایاں کام ہے۔ وہ روزانہ ایک سے زیادہ جگہوں پر جاتے ہیں تاکہ زیادہ سے زیادہ بلیوں کو خوراک دی جا سکے۔ اس کا کہنا ہے کہ بلیوں کے بغیر میرا شاید ہی کوئی دن گذرا ہو۔

اس نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ میں بلیوں کو گود لینے کے لیے بھی پیش کرتا ہوں۔ جب بلی کا مالک اپنے پالتو جانور سے چھٹکارا حاصل کر کے اسے سڑک پر چھوڑنا چاہتا ہے تو میں ایسا ہونے سے روکنے کے لیے انتظامات کرتا ہوں۔ کیونکہ اس سے بلی کو نقصان ہوتا ہے۔ آٹھ سال کے دوران محمد نے تقریباً 46,000 بلیوں کو گود لینے کی پیش کش کی۔

محمد فرج سرکاری حکام کے ساتھ شراکت داری کے ذریعے جانوروں کی فلاح و بہبود کے بارے میں کمیونٹی میں بیداری پیدا کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ وزارت ماحولیات، پانی اور زراعت کے ساتھ مل کر وہ بلیوں کے لیے بچاؤ کی کارروائیاں بھی کرتا ہے۔ الفرج مشرقی سعودی عرب کے 7 شہروں الخبر، الدمام، ظہران، سیھات، قطیف اور راس تنورہ میں بلیوں کی دیکھ بھال کے لیے کام کرتا ہے۔

ہر ریسکیو مشن میں محمد سب سے پہلے متعلقہ حکام سے بات کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ بعض اوقات مجھے سول ڈیفنس کے کچھ اہلکاروں کی طرف سے کوئی جواب نہیں ملتا اور مجھے متبادل تلاش کرنا پڑتا ہے۔ میں نے مناسب آلات جمع کرنا شروع کر دیے ہیں تاکہ میں جانوروں کی مدد کر سکوں۔ انہیں اس مشکل سے نکالوں جس میں وہ ہیں۔

وہ بتاتے ہیں کہ کبھی کبھی مجھے بیمار بلیاں ملتی ہیں۔ میں اپنے تجربے کے مطابق ان کے مالکان کو مشورہ دیتا ہوں اور ان کو سمجھاتا ہوں کہ بلی کی حالت دکھانے کے لیے ویٹرنری کلینک میں جانا ضروری ہے یا نہیں۔ خبر شہر میں ان کے گھر میں بڑی تعداد میں بلیاں موجود ہیں۔ انھیں نہلانا، صفائی کرنا اور ان کے فالتو بال صاف کرنا بھی ان کے حوالے سے ہونے والی خدمت کا حصہ ہے۔

الفرج نے بلیوں پر کارٹون اور ٹیلی ویژن کے کرداروں کے کچھ نام رکھے ہیں۔ وہ بچوں میں بلیوں کے حوالے سے ہمدردی اور شفقت کے جذبات کر پروان چڑھانے کی کوشش کرتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں