سعودی عرب کے ساتھ تعلقات کی مضبوطی سے مزید استحکام آئے گا: ایرانی عہدیدار

ہمسایہ ملکوں کی سکیورٹی پالیسی اہم ہے ، خطے میں مزید سفارتی اقدامات ہونا ہیں: ایرانی وزیر خارجہ حسین امیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران کی قومی سلامتی کونسل کے سکریٹری علی شمخانی نے کہا ہے کہ سعودی عرب کے ساتھ تعلقات کی مضبوطی مزید استحکام کا باعث بنے گی۔ ایرانی عہدیدار نے مزید کہا کہ ان کا ملک سعودی عرب کے ساتھ تعلقات میں مستقبل کا منتظر ہے۔ ایرانی قومی سلامتی کونسل کے سیکرٹری نے واضح کیا کہ سعودی عرب کے ساتھ ہونے والے مذاکرات صاف، شفاف اور تعمیری تھے۔

ایرانی وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے سعودی عرب کے ساتھ تعلقات کی بحالی کو خطے کے لیے بڑے امکانات پیدا ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا پڑوسی سکیورٹی پالیسی اہم ہے اور خطے میں مزید سفارتی اقدامات ہونا ہیں۔

سعودی قومی سلامتی کے مشیر ڈاکٹر مساعد بن محمد العيبان نے کہا کہ خادم حرمین شریفین شاہ سلمان اور شہزادہ محمد بن سلمان نے چینی صدر شی جن پنگ کے اچھے ہمسایہ تعلقات کو فروغ دینے کے فراخدلانہ اقدام کا خیرمقدم کیا ہے۔ سعودی عرب اور اسلامی جمہوریہ ایران کے درمیان تعلقات کی بحالی سعودی عرب کی جانب سے اچھے اصولوں پر عمل پیرا رہنے کی مضبوط اور مسلسل روش کے نتیجے میں سامنے آئی ہے۔

بیجنگ میں جاری ایک مشترکہ بیان کے مطابق سعودی عرب اور ایران نے سفارتی تعلقات دوبارہ شروع کرنے اور دونوں ملکوں کے سفارتخانوں کو دوبارہ کھولنے پر اتفاق کیا ہے۔ جسے جمعہ کو سرکاری سعودی پریس ایجنسی نے جاری کیا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ دونوں فریقوں نے ریاستوں کی خودمختاری کا احترام کرنے، دوسرے کے اندرونی معاملات میں مداخلت نہ کرنے اور 2001 میں طے پانے والے سکیورٹی تعاون کے معاہدے کو فعال کرنے پر اتفاق کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں