نیتن یاھو کا مسجد اقصیٰ میں کشیدگی کے بعد صورتحال کو پرسکون کرنے کا عزم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مقبوضہ یروشلم اور مسجد اقصیٰ میں آج بدھ کے روز اسرائیلی فوج کی کارروائیوں کے بعد اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھونے حالات کو پرسکون بنانےکے عزم کا اظہار کیا ہے۔

خبر رساں ادارے ’رائٹرز‘ کے مطابق بدھ کی صبح اسرائیلی پولیس نے مسجد اقصیٰ پر دھاوا بولنے کے بعد اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے اعلان کیا کہ تل ابیب صورتحال کو پرسکون کرنے کے لیے کام کر رہا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ اسرائیلی پولیس کی جانب سے مسجد اقصیٰ میں نمازیوں پر حملے اور غزہ سے راکٹ داغے جانے کے بعد فلسطینی علاقوں میں غیر معمولی کشیدگی دیکھی گئی۔

میدانی صورتحال میں تازہ ترین پیش رفت کے مطابق اسرائیلی طیاروں نے بدھ کی صبح گنجان آبادعلاقے غزہ کی پٹی پر بمباری کی۔

حماس ریڈیو پر اعلان کیا کہ حملوں میں دو تربیتی کیمپوں کو نشانہ بنایا۔ ان مکں ایک حملہ غزہ شہر اور دوسرا مہاجر کیمپ میں کیا گیا۔

مسجد اقصیٰ کے صحنوں پر حملہ

اسرائیلی پولیس نے منگل اور بدھ کی درمیانی شب مقبوضہ بیت المقدس میں واقع مسلمانوں کے تیسرے مقدس ترین مقام مسجد اقصیٰ میں دھاوا بول کر درجنوں نمازیوں کو زخمی کر دیا ہے، جبکہ 350 سے زائد کو گرفتار بھی کرلیا۔

فلسطین کے سرکاری خبر رساں ادارے وفا کی رپورٹ کے مطابق اسرائیلی سکیورٹی فورسز اس وقت مسجد اقصیٰ کے احاطے میں داخل ہوئیں جب سینکڑوں مسلمان رمضان المبارک کی شب عبادت میں مصروف تھے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے صحافیوں اور عینی شاہدین کے مطابق بدھ کی صبح غزہ کی پٹی سے اسرائیلی علاقے کی طرف کئی راکٹ فائر کیے گئے۔

صحافیوں کا کہنا تھا کہ انہوں نے تین راکٹ دور سے فائر ہوتے دیکھے جبکہ اسرائیلی فوج نے بتایا کہ غزہ کی پٹی کے ارد گرد کئی اسرائیلی شہری مراکز میں راکٹ کے وارننگ سائرن بجائے گئے۔

امریکی خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق تازہ ترین تشدد کے آغاز اور اس کی وجہ کے بارے میں فوری طور پر واضح نہیں ہوسکا ہے۔

ادھر اسرائیلی پولیس نے کہا کہ اس نے ’آتش گیر مادے، پتھروں اور لاٹھیوں‘ سے ’مسلح‘ نمازیوں کو نکالنے کے لیے طاقت کا استعمال کیا تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایک اسرائیلی اہلکار ٹانگ پر پتھر لگنے سے زخمی ہوا تھا۔

اسرائیلی پولیس نے مزید کہا کہ اس چھاپے میں درجنوں افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

مقبوضہ بیت المقدس میں تازہ ترین تشدد نے فلسطینیوں میں غم و غصے کی لہر دوڑا دی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں