اسرائیل کو دھمکانے والوں کے لیے کوئی جائے پناہ نہیں:نیتن یاھو کا پیغام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی "چینل 12" نے سکیورٹی میٹنگ کے دوران وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو اور اسرائیلی وزیر دفاع یوآو گیلنٹ کے حوالے سے اطلاع دی کہ "ان کی توجہ صرف اسلامی جہاد تحریک پر ہے اور ہم ضرورت کے مطابق اقدامات جاری رکھیں گے۔"

نیتن یاہو نے کہا کہ اسرائیل کو دھمکیاں دینے والے کسی بھی گروپ کے لیے کوئی جائے پناہ نہیں ہوگی۔ انہوں نے اسلامی جہاد اور حماس کی طرف سے اسرائیل کو کل منگل کےروز غزہ میں کی گئی کارروائی کے بعد دھمکیوں کا جواب دیا۔

اسرائیلی وزیراعظم نے مزید کہا کہ ان کا ملک طاقت سے نمٹے گا اور اس کا لمبا بازو ہماری مرضی کے مطابق کسی بھی جگہ اور وقت پر ہر دہشت گرد تک پہنچ جائے گا۔

اسرائیل کے وزیر توانائی یسرائیل کاٹز نے زور دے کر کہا کہ "اگر حماس تشدد میں شامل ہوتی ہے، تو اس کی قیادت پہلا ہدف ہو گی اور ہم ان لوگوں کو نقصان پہنچانے کے لیے کام کریں گے جو ہمیں نقصان پہنچاتے ہیں۔ حماس کے لیے ایک واضح پیغام ہے۔ یحیی السنوار اور محمد الضیف پہلا ہدف ہوں گے۔"

اسلامی جہاد کے قائدین
اسلامی جہاد کے قائدین

منگل کی سہ پہر اسرائیل نے جنوبی غزہ کی پٹی میں خان یونس کے مشرق میں توپ خانے سے گولہ باری کی۔

اسرائیلی فوج نے کہا کہ اس نے جنوبی غزہ میں ایک سیل کو نشانہ بنایا جو ٹینک شکن میزائل داغنا چاہتا تھا۔ غزہ کی پٹی کے شہری دفاع نے اعلان کیا ہے کہ خان یونس میں القرارہ کے مشرق میں ایک کار پر اسرائیلی بمباری کے نتیجے میں دو فلسطینی جاں بحق ہو گئے۔

جنوبی غزہ کی پٹی میں القدس بریگیڈز کے میزائل یونٹ کے سربراہ خالد الفرا کے قتل کی بھی خبر ہے۔

نیتن یاہو کے زیر صدارت جائزہ اجلاس
نیتن یاہو کے زیر صدارت جائزہ اجلاس

کل منگل کو اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے تل ابیب میں کابینہ کے اجلاس سے قبل سلامتی کی صورت حال کا ایک توسیعی جائزہ اجلاس منعقد کیا۔

جائزہ اجلاس میں وزیر دفاع وزیر سٹریٹجک امور چیف آف سٹاف اور متعدد حکام نے شرکت کی۔

نیتن یاہو نے کہا کہ "میں نے فوج کو متعدد محاذ جنگ کے لیے تیار رہنے کی ہدایات دیں۔ جو بھی اسرائیل کی سلامتی کو نقصان پہنچانے کی کوشش کرے گا اسے سزا دیں گے۔"

اس سے قبل گذشتہ روز حماس کے ترجمان حازم قاسم نے کہا تھا کہ جماعت اسرائیلی حملے کے جواب میں شامل ہوگی۔ اسرائیلی فوج کی کاررائی میں اسلامی جہاد کے سینیر کمانڈروں سمیت 13 فلسطینی مارے گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں