فلسطین اسرائیل تنازع

غزہ پر اسرائیل کی تازہ بمباری، تل ابیب پر راکٹ حملے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

غزہ کی پٹی کے کئی علاقوں پر اسرائیلی فوج نے تازہ فضائی اور زمینی حملے کیے ہیں، جب کہ حماس تحریک کے عسکری ونگ القسام بریگیڈز نے منگل کو اعلان کیا کہ اس نے وسطی اسرائیل کے شہر تل ابیب پر متعدد راکٹ داغے ہیں۔

القسام بریگیڈز نے ایک مختصر بیان میں کہا ہے کہ تل ابیب پر بمباری اسرائیل کی جانب سے عام شہریوں کو نشانہ بنانے کے جواب میں کی گئی۔

وسطی اسرائیل میں سائرن بجنے کی آوازیں

دوسری جانب اسرائیلی پولیس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ تل ابیب میں راکٹوں اور ان کے ٹکڑے گرنے کے نتیجے میں تین افراد زخمی ہوئے جن میں ایک کی حالت خطرے میں بیان کی جاتی ہے جب کہ راکٹ حملوں سے املاک کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

اسرائیلی فوج نے اعلان کیا کہ تل ابیب اور وسطی اسرائیل میں سائرن بج رہے ہیں۔

اسرائیلی میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ وسطی اسرائیل کو غزہ کی پٹی سے کل جمعہ کے بعد سے پہلے طویل فاصلے تک مار کرنے والے راکٹ حملے کا نشانہ بنایا گیا۔

175 سے زائد لاشوں کی تدفین

العربیہ/الحدث کے نامہ نگارکے مطابق متوازی طور پر ایک اسرائیلی حملے نے غزہ میں الشفاء میڈیکل کمپلیکس کے آس پاس کے علاقے کو نشانہ بنایا۔

انہوں نے کمپلیکس کے اندر سے مزید کہا کہ کمپلیکس میں کوئی طبی یا غذائی امداد نہیں پہنچی۔ کمپلیکس کے اندر تقریباً 5000 افراد موجود ہیں اور خوراک اور ادویات کی شدید قلت ہے۔

العربیہ/الحدث کے نامہ نگار نے اطلاع دی ہے کہ غزہ کے الشفا ہسپتال کے قریب ایک سو ستر سے زائد لاشوں کو اجتماعی قبر میں دفن کیا گیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسرائیلی ٹینک ہسپتال کے آس پاس سے تھوڑا پیچھے ہٹ گئے۔اس سے پہلے کہ ڈاکٹروں نے مرنے والوں کو کمپلیکس سے ہٹانے کی اجازت نہ دیے جانے کے بعد اجتماعی قبر میں دفن کرنے کی کوشش کی تھی۔

فلسطینی وزارت صحت نے اعلان کیا ہے کہ پیر تک غزہ کی پٹی پر اسرائیلی حملوں میں ہلاکتوں کی تعداد 11,255 ہو گئی ہے۔

4 ہزار سے زائد بچے

وزارت صحت نے مزید کہا کہ شہید ہونے والوں میں 4,630 بچے ، 3,130 خواتین اور 682 بزرگ شامل ہیں جب کہ زخمیوں کی تعداد تقریباً 29,000 تک پہنچ گئی ہے۔

دریں اثنا وزارت نے اپنی روزانہ کی رپورٹ میں کہا ہے کہ اسے شمال کے ہسپتالوں میں خدمات اور رابطوں کے خاتمے کی وجہ سے مسلسل تیسرے دن ہلاکتوں کے اعداد و شمار کو اپ ڈیٹ کرنے میں مشکل کا سامنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ 3,250 سے زیادہ شہری اب بھی لاپتہ ہیں یا ملبے تلے دبے ہیں جن میں 1,700 بچے بھی شامل ہیں۔

یروشلم سمیت مغربی کنارے میں 7 اکتوبر سے منگل کی شام تک ہلاکتوں کی تعداد 196 تک پہنچ گئی۔ کل منگل کوطولکرم میں اسرائیلی فوج نے دھاوا بول دیا اور فائرنگ کرکے سات فلسطینی شہریوں کو موت کی نیند سلا دیا۔ پچھلے ایک ماہ سے غرب اردن میں اسرائیلی فوج کی کارروائیوں میں تقریباً 2700 فلسطینی زخمی ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں