غزہ ثالثی میں دوحا کے کردار پر نیتن یاہو کے مبینہ بیان پر قطر کو تشویش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

قطری حکام کے مطابق اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو سے منسوب مبینہ طور پر ٹیپ پر ریکارڈ شدہ بیان پر تشویش ہے جس میں انہوں نے غزہ جنگ میں دوحا کے ثالث کے کردار کو "مسئلہ" قرار دیا۔

اسرائیلی نیوز آؤٹ لیٹ چینل 12 کے مطابق اس ہفتے غزہ میں یرغمال افراد کے اہل خانہ سے ملاقات میں نیتن یاہو نے قطر پر حماس کی مالی معاونت کا الزام لگایا اور کہا کہ وہ خلیجی ریاست میں ایک فوجی مرکز کی موجودگی میں توسیع کے امریکی فیصلے پر پریشان ہیں۔

مصر اور امریکا کے ساتھ قطر نومبر میں غزہ میں ایک ہفتے طویل جنگ بندی اور 105 اسرائیلی مغویوں کی رہائی کے معاہدے کے ثالثوں میں سے ایک تھا۔

نیتن یاہو نے چینل 12 کی حاصل کردہ ریکارڈنگ میں مبینہ طور پر کہا، "آپ مجھے قطر کا شکریہ ادا کرتے ہوئے نہیں سن رہے۔ جو بنیادی طور پر اقوام متحدہ یا صلیب احمر سے مختلف نہیں بلکہ اس سے بھی زیادہ پریشانی کا باعث ہے۔ مجھے ان کے بارے میں کوئی وہم نہیں ہے۔"

نیتن یاہو نے مزید کہا کہ، “ان کے پاس (حماس پر) دباؤ ڈالنے کے ذرائع ہیں۔ اور کیوں؟ کیونکہ وہ ان کی مالی اعانت کرتے ہیں۔” اسرائیلی وزیر اعظم نے مزید کہا کہ وہ واشنگٹن کے قطر کے ساتھ اپنے فوجی اڈے کے معاہدے کی تجدید کے فیصلے پر "بہت ناراض" تھے۔

سوشل میڈیا پلیٹ فارم ایکس پر پوسٹ کیے گئے ایک بیان میں قطری وزارت خارجہ کے ترجمان ماجد الانصاری نے کہا کہ ان کے ملک کو "اسرائیلی وزیر اعظم سے منسوب مبینہ ریمارکس سے تشویش ہے"۔

بیان میں کہا گیا، "یہ ریمارکس اگر درست ہیں تو غیر ذمہ دارانہ اور معصوم جانوں کو بچانے کی کوششوں کے لیے تباہ کن ہیں لیکن ہمیں ان پر کوئی حیرانی نہیں۔"

قطر اب بھی مذاکرات میں شامل ہے جس کا مقصد یرغمالیوں کی رہائی کا نیا معاہدہ طے کرنا ہے اور انصاری نے کہا کہ نیتن یاہو کے ریمارکس ان کوششوں کے لیے نقصان دہ ہیں۔

بیان میں کہا گیا، ''اگر یہ تبصرے درست ثابت ہوئے تو اسرائیلی وزیر اعظم ثالثی کے عمل میں رکاوٹیں پیدا کریں گے اور اسے نقصان پہنچائیں گے۔ یہ ایسی وجوہات ہیں جو اسرائیلی یرغمالیوں سمیت معصوم جانوں کو بچانے کے بجائے ان کے سیاسی کیریئر کو فائدہ پہنچاتی نظر آتی ہیں۔"

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ نیتن یاہو کو "امریکہ کے ساتھ قطر کے سٹریٹیجک تعلقات کے بارے میں فکر کرنے کے بجائے یرغمالیوں کی رہائی پر توجہ دینی چاہیے۔"

قطر میں العدید ایئر بیس پر پینٹاگون کی سنٹرل کمانڈ کا علاقائی ہیڈکواٹر ہے اور خلیجی علاقے میں گشت کرنے والے امریکی بحری جہازوں کو باقاعدہ ساحل پر آنے کی اجازت دیتا ہے۔

خلیجی ملک میں حماس کی سیاسی قیادت مقیم ہے اور حالیہ برسوں میں اس نے غزہ کی پٹی کو کروڑوں ڈالر کی امداد بھیجی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں