یمن: بارودی سرنگوں کی صفائی کے سعودی منصوبے سےاقوام متحدہ کے عہدے دارنے آگاہی حاصل کی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے زیر زمین بچھائی گئی بارودی سرنگیں صاف کرنے کے شعبے کے ڈائریکٹر سے اقوام متحدہ کے حکام نے عدن میں اس منصوبے کے ہیڈ کواٹرز میں ملاقات کی ہے۔ اقوام متحدہ کے دفتر منصوبہ خدمات و مشاورت کے سربراہ فرسبی کے ساتھ یو این او کے ماہر جاوید حبیب اللہ بھی موجود تھے۔

سعودی دائریکٹر اسامہ الغوسیبی نے ان علاقوں کی بطور خاص نشاندہی کی جہاں بارودی سرنگیں زیر زمین بچھائی گئی ہیں اور کمیونٹیز کے لیے سخت خطرے کا سبب ہیں۔ جبکہ ان کی ٹیم ان بچھای ہوئی سرنگوں کی صفائی پر مامور ہے۔

انہوں نے اس سلسلے میں بین الاقوامی برادری کی دلسچسپی اور تعاون کی کمی کا ذکر بھی کیا۔ جو یمن میں بچھائی گئی ان بارودی سرنگوں کی صفائی کے لیے ضروری ہے۔ مگر فراہم نہیں ہے۔

الغوسیبی نے کہا ان بارودی سرنگوں سے چھٹکارے کے لیے ٹھوس کوششوں کی ضرورت ہے۔ تاکہ ایرانی حمایت یافتہ حوثیوں کو مزید بارودی سرنگیں بچھانے سے روکا جا سکے۔ نیزان سے بین الاقوامی قانون کے مطابق وہ نقشے حاصل کیے جا سکیں جو ان بارودی سرنگوں کو اکھاڑ پھینکے کے لیے ضروری ہیں۔

اس موقع پر انہوں نے اقوام متحدہ کے عہدے داروں کو سعودی منصوبے کی اب تک کامیابیوں کے بارے میں بھی اعتماد میں لیا۔ انہوں نے بتایا کہ اس عرصے میں یمن کے مائن ایکشن سنٹراور مقامی لوگوں کے ساتھ اس مشن کے لیے شراکت داری کا معاہدہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا بارودی سرنگوں کی صفائی کے حوالے سے میڈیا کو ہفتہ وار بریفنگ دی جاتی ہے۔

سعودی منصوبے کے چیف ٹیکنیکل ایڈوائزر نے یوا ین او کے حکام کو اپنے پراجیکٹ کے آپریشنز کے حوالے سے حکمت عملی کے بارے میں بتایا ۔ مزید بتایا کہ کس طرح ان کے کارکن کیا کیا طریقے اختیار کر رہے ہیں.

اقوام متحدہ کے نمائندے نے اس بارے میں جانکاری ملنے پر سعودی منصوبے کی تعریف کی۔ منصوبے کو منظم اور متحرک قرار دیا اور اس منصوبے سے یمنی شہریوں کے تحفظ کے امکانات کی تعریف کی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں