بحیرہ احمر میں حوثیوں کا ڈرون حملہ، کوئی نقصان نہیں ہو ا: امریکی سینٹ کام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

بغیر پائلٹ کے چلائے جانے والے ڈرون سے خلیج عدن میں کارروائی کی گئی ہے۔ یہ ڈرون حوثیوں کے زیر قبضہ یمنی علاقوں سے جمعہ کے روز لانچ کیا گیا۔ اس امر کی اطلاع امریکی سینٹ کام نے دی ہے۔

امریکی سینٹرل کمانڈ کے مطابق اس ڈرون حملے سے کوئی امریکی یا کسی یورپی اتحادی کے فوجی نوعیت کے نقصان سمیت کسی تجارتی بحری جہاز کا بھی کوئی نقصان نہیں ہوا ہے۔

خیال رہے پچھلے سال ماہ نومبر سے بحیرہ احمر کے علاقے میں حوثیوں کی طرف سے حملے جاری ہیں۔ ان حملوں کی وجہ غزہ میں ماہ اکتوبر سے جاری جنگ ہے۔ جس کے رد عمل میں حوثی غزہ کے فلسطینیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے اسرائیل ، اس کے اتحادیوں کے جنگی و تجارتی جہازوں کو نشانہ بنانے کے لئے راکٹ یا ڈورون طیارے استعمال کر رہے ہیں۔

حوثیوں کے ان حملوں کو روکنے کے لیے امریکہ نے برطآنیہ و دیگر کئی مغربی ممالک سمیت دوسرے ملکوں کو ساتھ ملا کر ایک اتحاد قائم کیا ہے۔ مگر حوثیوں کے حملے ابھی جاری ہیں۔

ایرانی حمایت یافتہ حوثی جنگجو نے اس دوران بار بار ڈرون اور میزائل حملے کیے ہیں۔ان کے حملوں کا نشانہ بحری جنگی جہازوں کے علاوہ تجارتی بحری جہاز بھی ہی ۔ وہ بحیرہ احمر، باب المندب اور خلیج عدن میں ماہ نومبر سے بغیر کسی تعطل کے حملے جاری ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں