آئندہ برس 'نیوم پروجیکٹ' میں ورکرز کی تعداد دو لاکھ سے تجاوز کرجائے گی: چیئرمین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

'نیوم' میں جاری مختلف منصوبوں پر وسیع پیمانے پر کام جاری ہے۔ پروجیکٹ کے چیف ایگزیکٹو'نظمی نصر' نے کہا ہے کہ اس وقت نیوم میں ایک لاکھ چالیس ہزار سے زائد لوگ کام کررہے ہیں جب کہ آئندہ سال اس میں کام کرنے والے ورکرز کی تعداد دو لاکھ سے تجاوز کرجائے گی۔

ریاض میں سعودی-برطانوی "عظیم مستقبل" انیشیٹو کانفرنس کے پہلے دن اپنے خطاب میں النصر نے توقع ظاہر کی کہ اگلے سال پروجیکٹ ورکرز کی تعداد 200,000 تک پہنچ جائے گی۔

سعودی عرب میں جاری میگا منصوبوں نیوم، قدیہ اور بحیرہ احمر منصوبوں کے سربرہان نے ان پروجیکٹ کے لیے سعودی وژن 2030 پر بھی روشنی ڈالی۔

النصر نے کہا کہ مقامی اور بین الاقوامی شراکت داروں کے لیے 'نیوم' شاندار کاروباری مواقع پیش کرتا ہے۔ زمین پر ہزاروں کارکنوں کی موجودگی کے ساتھ اس منصوبے میں زندگی واضح طور پر نظر آنے لگی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہمارے پاس 100 سے زائد ممالک سے تقریباً 5000 کل وقتی ملازمین کام کرتے ہیں"۔

گریٹ فیوچر انیشیٹو کانفرنس کا انعقاد سعودی عرب کی میزبانی میں کیا گیا ہے جس میں سعودی عرب اور برطانیہ کے سرکاری اور نجی شعبوں کے 800 افراد شرکت کریں گے۔ دو روزہ کانفرنس کا مقصد دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی تعلقات کو مضبوط بنانا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں