’روڈ ٹو مکہ‘ پروگرام میں سعودی خواتین ملازمین کی تعداد دوگنا ہوگئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی خواتین " روڈ ٹو مکہ" اقدام کے ذریعے خدا کے مقدس گھر کے زائرین کی خدمت میں مؤثر کردار ادا کر رہی ہیں۔ یہ پروگرام ضیوف الرحمان کی خدمت کے لیے مملکت کی وزارت داخلہ کے اقدامات کے سلسلے کی ایک کڑی اور وژن 2023 اقدامات میں سے ایک اقدام ہے۔

اس پروگرام میں مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ کے ہوائی اڈوں پر اترنے والے عازمین حج کو ان کی قیام گاہوں تک پہنچنے کے طریقہ کو منظم اور سہل بنانے کے لیے ہرممکن سہولت فراہم کی جاتی ہے۔

انڈونیشیا کےشہر سولو کے اڈیسومارمو انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر "روڈ ٹو مکہ " اقدام کے لاؤنج میں خدمات انجام دینے والی فرسٹ سارجنٹ اشواق عبدہ آل مطہر نے وضاحت کی کہ وطن عزیز کی خدمت کرنا خاص طور پر ضیوف الرحمان کی خدمت ہرمردو زن شہری کے لیے ایک بڑا اعزاز ہے۔ انہوں نے کہا کہ حجاج اور معتمرین کی خدمت سعودی عرب کا طرہ امتیاز ہے۔ مملکت کا ہر شہری حجاج کرام کی خدمت کو اپنے لیے فرض سمجھتا ہے۔

سعودی عرب کی خبر رساں ایجنسی ’ایس پی اے‘ کے مطابق سامح یوسف ہارون جو اڈیسومرمو ایئرپورٹ ’روڈ ٹو مکہ انیشی ایٹو‘ ٹیم میں کام کرتی ہیں نے کہا کہ عازمین حج کی خدمت کرنا ان کے لیے سعادت کا باعث ہے۔اس نے کہا کہ ٹیم کے تمام ارکان کو فخر ہے کہ ہم سب ایک ہی مشن یعنی اللہ کے مہمانوں کی خدمت میں دن رات کام کٰر رہے ہیں۔

شوروک ابراہیم ابو خدیجہ نے وضاحت کی کہ "روڈ ٹو مکہ انیشی ایٹو‘ کا مقصد ضیوف الرحمان کو بہترین خدمات فراہم کرنا ہے۔ یہ خدمات انہیں اپنے اپنے ملکوں سے سعودی عرب کی طرف روانگی سے لے کر حج کی تکمیل کے بعد وطن واپسی تک فراہم کی جاتی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں