.

خیبر ایجنسی متحارب جنگجو گروپوں میں لڑائی، 24 ہلاک

طالبان جنگجو اور انصار الاسلام کے فدائی آمنے سامنے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
پاکستان کے وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں دو کالعدم جنگجو تنظیموں کے درمیان جھڑپوں میں چوبیس افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

پاکستان کے انٹیلی جنس کے حکام کے مطابق کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) اور اس کی حریف تنظیم انصار الاسلام کے درمیان خیبر ایجنسی کی وادی تیراہ میں واقع ایک گاؤں میدان میں جمعرات کی شام لڑائی شروع ہوئی تھی۔ مرنے والوں میں انصار الاسلام کے پندرہ اور تحریک طالبان کے نو جنگجو شامل ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ متحارب جنگجو گروپوں کے درمیان جمعہ کو بھی لڑائی جاری رہی ہے اور مرنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ کالعدم تحریک طالبان کے ترجمان سادات آفریدی نے ٹی ٹی پی کے تین ٹھکانوں پر قبضے کا دعویٰ کیا ہے۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ ان کا گروپ وادی تیراہ سے طالبان کے جنگجوؤں کو نکال باہر کرنا چاہتا ہے کیونکہ وہ مساجد اور عوامی مقامات پر بم حملے کرتے ہیں اور یہ اسلام کے خلاف ہے۔ آفریدی کا کہنا تھا کہ ان کی تنظیم ٹی ٹی پی کو بے گناہ لوگوں کو مذہب کے نام پر قتل کرنے کی اجازت نہیں دے گی۔

واضح رہے کہ وادی تیراہ میں تین چار جنگجو تنظیموں لشکر اسلام، انصار الاسلام، منگل باغ گروپ اور تحریک طالبان کے جنگجوؤں کے درمیان علاقے میں اپنا کنٹرول حاصل کرنے کے لیے 2005ء سے وقفے وقفے سے لڑائی جاری ہے۔ اس وقت لشکر اسلام کا کالعدم تحریک طالبان کے ساتھ اتحاد ہے لیکن لشکر اسلام کے جنگجو متحارب انصار الاسلام کے ساتھ حالیہ لڑائی میں طالبان جنگجوؤں کا ساتھ نہیں۔